.... How to Find Your Subject Study Group & Join ....   .... Find Your Subject Study Group & Join ....  

We are here with you hands in hands to facilitate your learning & don't appreciate the idea of copying or replicating solutions. Read More>>

Study Groups By Subject code Wise (Click Below on your university link & Join Your Subject Group)

[ + VU Study Groups Subject Code Wise ]  [ + COMSATS Virtual Campus Study Groups Subject Code Wise ]

Looking For Something at vustudents.ning.com?Search Here

لڑکا لڑکی کے پروپوز کرنے کے معیارات کیا ہیں؟؟

معاشرے میں اور کوئی تبدیلی آئی ہو یا نہ آئی ہو اس معاملے میں ہماری نوجوان نسل بہت تیزی سے پروان چڑھ رہی ہے ہر دوسرے دن ان کو کوئی بھا ہ جاتا ہے یا جاتی ہے اور ایک دوسرے کو پروپوز کر دیا جاتا ہے

ان کو معلو م نہیں ہے کہ زندگی کا ساتھی  چننے کے لیے کونسے معیارات ہر اس کی پرکھ ہونی چاہیے۔ کن  اور پہلووں پر وہ کمپرومائز کر سکتے ہیں

اور کن پر سمجھوتے کی گنجائش نہیں

کیا اس قسم کے بندھن میں خاندان کا بھی کوئی عمل دخل ہونا چاہیے یا یہ سرا سر دو افراد  کا معاملہ ہے؟؟

اسلام میں پسند کی شادی کے بارے کیا تصور ہے؟ 

پسند کی شادی کے فوائد و نقصانات کیا ہو سکتے ہیں؟

ارینج شادی کی صورت  میں معاملات کس نہج پر جاتے ہیں ؟؟

ایسے بہت سے سوال اور ان کے جواب  آپ کے ذہنوں سے دور کریں گے  ان ابہام کو جو آپ کو سراب نظر آتے ہیں۔ سراب اور حقیقت مین فرق  کو واضح کرنے کے لیے آئے مل کر حل سوچتے ہیں

This Content Originally Published by a member of VU Students.

Views: 1535

See Your Saved Posts Timeline

Reply to This

Replies to This Discussion

یقینا بیٹے پر فرض ہے، بہو پر نہیں۔۔

I disagree a bit with you here Zehra, apki bat ka zyda tar log yehi matlab lain ge k saas, susar ki khidmat bojh hai. Iska right angle yehi hai k agar ap combined family me married hain to phr apka ikhlaqi farz ban jata hai k saas-susar ka khayal rakhen. Kisi buzurg admi ki beshak wo rishta dar na b ho khidmat kerna beshak wajib nahi laikin ye Allah ki raza hasil kerne ka waseela zaroor hai.

Yes, i believe k shuru se hi separate hona chahiye, is tarha na hi parents ki zyda expectations banti hain or na hi khidmat ka "bojh" larki pe perta hai. Koi khidmat kerta hai to apni hi aqibat sanwarta hai, agar bojh lagay to naiki b naiki nahi rehti.

ماں باپ کی خدمت بیٹے کی زمہ داری ہے۔۔

لیکن ایک بات ایڈ کرونگی کہ جیسے والدین شادی کے بعد ببھی بیٹے کی زمہداری اٹھاتے ہیں اسی طرح بہو کی زمہ داری بنتی خدمت کرنا۔۔

وہ بات اسلامی پوائنٹ آف ویو سے کی گئی ہے۔۔

Kisi buzurg admi ki beshak wo rishta dar na b ho khidmat kerna beshak wajib nahi laikin ye Allah ki raza hasil kerne ka waseela zaroor hai.

میں آپکی بات سے متفق لیکن ایسا تب ہو جب لڑکی اس چیز کا احساس کرے۔۔ بیشک تالی دونوں ہاتھوں سے بجتی لیکن اس بات کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا کہ کئی بہویں والدین سے اچھا سلوک نہیں کرتی۔ اس تکلیف سے بہتر کے انھہیں شروع میں ہی الگ کر دیا جائے۔۔

jb byti ki shadi hoti hy to usko ak hi bat btae jati hy k ub wohi tmhara ghr hy or saas usar hi tmhary parents hain unki khidmat krna or mostly girls isi bat pr amaal b krti hain lakin saas susar ka b farz bnta k wo us ko bahoo ni byti smjain lakin aisa hota ni hy jis ki wja sy start sy hi seprate rehny or khidmat krna farz ni baho pr tab hi aise batain start hoti hain or bahoo buri ban jati hy ...... or maan baap ki khidmat un k bety pr farz hy 

Waise to combined family system ab khatam hota ja raha hai. Or jo reh b gaya hai wo logo ki majbori ki waja se hai, jo log separate hona afford nahi ker sakte sirf wo log hi combined system me rehne pe majboor hain. Agar financial issues hon to me yehi munasib samajta hon k combined system pe compromise ker lena chahiye. Han agar family afford ker sakti hai to zyda behtar yehi hai k separate ho jayen.

Saas ka baharhal ghar pe established haq hota hai, jab bahoo aa k us haq ko challenge kerti hai to tab hi problems shuru hote hain. Jis aurat ne apni sari zindagi us ghar ko di hoti hai, bahu us ghar me aa k aksar ghar ki chaudhary ban'ne ki koshish kerti hai. Yehi fisaad ki jarr hai. Agar ap ghar k power holder ki respect karen gi or us se power cheen'ne k bajaye uske dil me jaga banaye gi to ap dekhna khud hi aisa din aye ga, beshak dair se aye, jab saas khud apko ghar ki power de de gi. Laikin is power play me aksar larkion se sabar nahi hota. Jab wo khud saas banti hain, unko tab hi samaj ati hai, but us waqt bohat dair ho chuki hoti hai.

You are right. I have seen these cases from both sides with my eyes.

اگر لڑکی ساس کو قبول کرلے اور انکی بس فرمانبرداری کرے تو بہت کم ٹائم میں ساس سب کچھ آہستہ آہستہ بہو کے حوالے کر دیتی۔۔ اور اگر بہو نے سب اپنی ہاتھ میں کرنا چایا شروع میں ہی وہاں آج تک سب معاملات ساس خود دیکھتی۔۔

RSS

Forum Categorizes

Job's & Careers (Latest Jobs)

Admissions (Latest Admissons)

Scholarship (Latest Scholarships)

Internship (Latest Internships)

VU Study

Other Universities/Colleges/Schools Help

    ::::::::::: More Categorizes :::::::::::

Today Top Members 

Member of The Month

1. ٹمبکٹو

---, Pakistan

© 2017   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service