Latest Activity In Study Groups

Join Your Study Groups

VU Past Papers, MCQs and More

We non-commercial site working hard since 2009 to facilitate learning Read More. We can't keep up without your support. Donate.

 اعمال اور نوافل تو لوگ کثرت سے اختیار کر لیتے ہیں ، کیونکہ یہ ایک وجودی شے ہے - 

دوسرے لوگ بھی اس کا مشاہدہ کرتے ہیں - اس لئے نفس کو اس میں بڑا مزہ ملتا ہے - 

اس میں طلب جاہ کے مواقع بھی ملتے ہیں - 

لیکن ایسے عمل جن میں گناہوں سے رک جانا ہوتا ہے وہ نفس پر بڑے گراں گزرتے ہیں - 

مثلاً جھوٹ ترک کرنا یا غیبت سے باز رہنا - 

چونکہ ایسے گناہوں کو ترک کرنے میں شہرت اور ناموری نہیں ہوتی اس لئے ان کی طرف کوئی التفات نہیں کرتا - 

احادیث میں اس کا اہتمام زیادہ آیا ہے اور اسے ورع کہتے ہیں -

Views: 371

Reply to This

Replies to This Discussion

gud

nice

Nice sharing .... 

Yes, this is wara I tell you more about wara by some quotation of followers of NBI PAK (SAW):

In tarmazi hadees Hazrat Attiya bib arwa sadi(R.A) sa rawayat hai ,NBI PAK (SAW) na farmaya banda  is waqat tak parhagar logo mein shumar nahi hota jub tak in chezo ko taraq na Karen jin mein kuch harj nahi taa ka wo harj walay amal sa bach sake.

 

Wara ki do kinds hai aik zahri wara wo yah ka insan harkat karey tou siraf ALLAH ka liya .Dosri batni wara jo yeh hai ka tumhare dil mein ALLAH kay siwa koi aur dahkil he na ho.

 

In soora maida para 7, ayat 100

ALLAH PAK says:

AP (SAW) farmadijey keh pak or napak chizay baraber nahi ho sakti although napak ki kasrat tumhey bahli lagay Aqal walo! ALLAH sa daro taa ka tum kamyab ho.

nice sharing leaf bhai JAZAKALLAH khair.

RSS

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service