We are here with you hands in hands to facilitate your learning & don't appreciate the idea of copying or replicating solutions. Read More>>

Looking For Something at vustudents.ning.com? Click Here to Search

www.bit.ly/vucodes

+ Link For Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution

www.bit.ly/papersvu

+ Link For Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More

سچ تو کہیں نہیں ہوتا اور جھوٹ بھی کہیں نہیں ہوتا یہ ہمارا اپنا نقطہ نظر ہے کہ لفظوں کو معنی مل گئے ہیں
کسی کا گلا گھونٹ دو یہ قتل ہے کسی کی انا کا گلا گھونٹ دو یہ بھی قتل ہے
لیکن ہمارے ہاں*صرف پہلا جرم سنگین سمجھا گیا ہے دراصل یہ نقطہ نگاہ کا فرق ہے جس نے سچ اور جھوٹ کی الگ الگ شکلیں متعین کر لی ہیں اگر میرا بس چلتا تومیں انسانی قتل کے مقابلے میں انسانی انا کے قتل کو بڑا جرم قرار دیتی تب سچ کی یہی شکل حقیقی ہوتی
یہی حال رومان کا ہے

بعض لوگ رومان کی خاطر مر جاتے ہیں یہی انکا سچ ہوتا ہے
بض لوگ رومان کو مضحکہ خیز قرار دیتے ہیں یہ ان کے نزدیک سچ ہوتا ہے
بعضلوگ زندگی کے ہر رویے کو محض معاشی نقطہ نگاہ سے ماپتے ہیں یہ انکا سچ ہوتا ہے
ا س زمین پر اتنے سچ بکھرے پڑے ہیں کہ اصل سچ ہاتھ ہی نہیں آتا
شاید یہ مٹی کی تاثیر ہو جیسے پرانے زمانے کا وامع ہے کہ ایک فرمانبردار ہندونوجوان بیگی کے ایک بڑے پلڑے میں ماں کو اور دوسرے پلڑے میں باپ کو سوار کر کے یاترا کے لیئے جا رہا تھا سینکڑوں میل کا سفر کر کہ جب و ہ سیالکوٹ پہنچا تو اس نے بینگی زمین پر رکھ دی
ور والدین سے بولا بس ہو چکا یاترا میں آگے نہیں جا سکتا کیونکہ تمھارا بوجھ اٹھانے کی ہمت اب مجھ میں نہیں رہی
بھوڑے والدین سخت پریشان ہوئے لیکن اس کا باپ جہاں دید آدمی تھا نرمی سے بولا
واقع بیٹا جتنی تم نے ہماری سیوا کی کوئی نہیں کر سکتا تھا ہم تمھارے مشکور ہیں لیکن تم نے جو ہمارے لیئے کشٹ کاٹی ہے
ایک تکلیف اور کرو ہمیں ایک میل اور آگے لے جاؤ بھگوان نے چاہا تو کوئی نہ کوئی آسرا بن جائے گا
لڑکا بمشکل رضامند ہو گیا مگر جونہی وہ ایک میل کا سفر طے کر کے سیالکوٹ کی سرحد سے باہر ہوا تو اپنے سلوک پر سخت شرمندہ ہوا
والدین کے پاؤن پڑ گیا اور رو رو کر معافیاں مانگنے لگا
باپ نے اسے تسلی دی بیٹا تیراکوئی قصور نہیں تھا یہ اس مٹی کا قصور تھا جس پے تم نے بینگی روک لی تھی سو اب بات ختم ہوگئی کیونکہ وہ زمین اب پیچھے رہ گئی ہے

جنت کی تلاش………………………رحیم گل

+ Click Here To Join also Our facebook study Group.

..How to Join Subject Study Groups & Get Helping Material?..


See Your Saved Posts Timeline

Views: 247

.

+ http://bit.ly/vucodes (Link for Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution)

+ http://bit.ly/papersvu (Link for Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More)

+ Click Here to Search (Looking For something at vustudents.ning.com?)

Reply to This

Replies to This Discussion

Awsum...

 

برخورداری معذرت کے ساتھ ایک تو املاء کی کچھ غلطیاں ہیں ان کو درست کر لیں دوسرے تحریر نامکمل ہے اس کا سیاق و سباق پتا نہیں چل رہا اس لیے بات سمجھ سے بلاتر ہے یہ کنفیوژن دور کریں تو کچھ بات ہو گی  اس پر

نے چاہا تو کوئی نہ کوئی آسرا بن جائے گا
لڑکا بمشکل رضامند ہو گیا مگر جونہی وہ ایک میل کا سفر طے کر کے سیالکوٹ کی سرحد سے باہر ہوا تو اپنے سلوک پر سخت شرمندہ ہوا
والدین کے پاؤن پڑ گیا اور رو

Gracious is ki smj ni ay ,, kis bat ny us ko sharmindgi ka ahsas dilaya aur zameen k pechy reh jany k taluq mujy smj ni ay.. 

Uske walid ne jab betay ki naiki ko acknowledge kia or usko appreciate kia. Uski izzat e nafs (NOT Anna) ki respect ki to betay k zameer ne usko malamat kia. Actually bap k achay ikhlaq ne betay ye ahsas dia.

Zameen wali bat, ya matti ka asar ye hai k kuch buzurg ye samajte hain k har matti ki taseer hoti hai, maslan wafadar logo ki matti, bewafa logo ki matti etc. Btw i have heard k Iraq ya Israel me se aik mulq aisa hai jis sar zameen pe sab se zyda Anbia (AS) bheje gaye hain but unho ne aksar se wafa nahi ki. Isko mitti ka asar kaha ja sakta hai.

Jazak Allah  ツβµŕɨeď€ʍʍÖツ for this narration 

Is post k Title ka is discussion sy kia taluq hia .. kuch had tak smjhi hon mzed koi explain kr skay ??

I will explain it . bs thori dair rak online ati hu :)

Title intellectually relevant hai, but zahiri tor pe connectivity missing lagti hai. Still I agree with the title - minus name of the author

Sara ye novel hy :P search kr lena google py, 

 مٹی کا قصور تھا ka matlub: kuch society norms and value hoti hy jo hr jga k alag hoty hian, esi trha hr jga py jaha ka insaan ho ga logo k mind py usi trha k impression pry ga , phir logo k mind may aik image ban jati k dekho es jga k log es trha k hain . etc etc etc

larka apny behavior ki wja sy sharminda tha k maa baap ko jab us ny ye saaf saaf keh dia k may agy nhi ja skta to agy sy maa baap ny kia kaha  

ایک تکلیف اور کرو ہمیں ایک میل اور آگے لے جاؤ بھگوان نے چاہا تو کوئی نہ کوئی آسرا بن جائے گا
wesy agr basic level sy dekha jay to maa baap hr mumkin kosish kr k humy zindagi ki hr asaiesh deity hian. to umer k es hisy may ak aulad ka bhi faraz hy k un ki hr mumkin madad kry khidmat kry, 

well yahi chz us k mind may ai ho ge jis ki wja sy apny kiy gay bartao py sharminda tha. 

 superb explanation BE

RSS

© 2019   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service