We are here with you hands in hands to facilitate your learning & don't appreciate the idea of copying or replicating solutions. Read More>>

Looking For Something at vustudents.ning.com? Click Here to Search

www.bit.ly/vucodes

+ Link For Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution

www.bit.ly/papersvu

+ Link For Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More


Dear Students! Share your Assignments / GDBs / Quizzes files as you receive in your LMS, So it can be discussed/solved timely. Add Discussion

How to Add New Discussion in Study Group ? Step By Step Guide Click Here.

یہ بات ایک حقیقت ہے کہ دین اسلام اور ہمارے معاشرے میں ماﺅں کا مقام اور مرتبہ بہت بلند ہوتا ہے حدیث نبوی بھی ہے کہ ”جنت ماﺅں کے قدموں تلے ہوتی ہے“ ماں کوایک مرتبہ مسکرا کر دیکھنا بھی نیکی میں شمار ہوتا ہے لیکن آج کے دور میں نظر اُٹھا کر دیکھیں تو ہمارے اطراف میں آج کی اولادوں اور آج کی مائیں کیا اپنا فرض صحیح طریقے سے ادا کررہی ہیں؟

نہیں ایسا ہرگز نہیں ہے آج کا دور بہت زیادہ تیز رفتار ترقی کا دور ہے الیکٹرانک اور پرنٹ میڈا کی ترقی نے اور الیکٹرانک اشیاءکی بھر مار نے جہاں زندگی کو آسان سہل اور پرتعیش بنا کر پیش کردیا ہے وہیں ہم ماﺅں کی ذمہ داریوں میں بھی بے پناہ اضافہ کردیا ہے اور کیا دور حاضر کی ماں ان ذمہ داریوں کے احسن طریقے سے پورا کررہی ہے آج کا یہ سوال نئے دور میں تمام ماﺅں کے لئے ایک سوالہ نشان ہے؟

آج کی ماﺅں کو دراصل دوہرے محاذ پر لڑنا ہوگا انہیں اسے اپنے آپ کو اس قدر تیکنیکی ساﺅنڈ کرتے ہوئے اپنے بڑھتے ہوئی عمر کے بچوں کی نگہداشت کرنی ہوگی کہ انہیں یہ محسوس نہ ہو کہ ان پر کوئی پابندی عائد کی جارہی ہے یا وہ کسی دباﺅ کا شکار ہیں نو عمر بڑھتی ہوئی عمر کے بچے اور بچیاں نازک سے پھلوں کی کلیوں کے ماند ہوتے ہیں جنہیں معاشرے میں بڑھتی ہوئی آلودگیوں سے بچانے کے لئے ماں کا کردار بہت اہم ہوتا ہے اور عصر حاضر کی ماﺅں کی کمپیوٹر امیج کے ان بچوں کو ہینڈل کرنے کے لئے بہت دانشمندی اور عقل و فراست سے کام لیتے ہوئے انہیں مطلوبہ ٹائم دینا ہوگا کہ کہیں یہ کلیاں جنہیں پھول بن کر کھلنا ہے بن کھلے ہی نہ مرجھاجائیں اور یہ ہم ماﺅں کی ہی ذمہ داری ہے کہ ہم ارفع کریم ارندھا معین نوازش ملالہ یوسف زئی اور شرمین عبید چنائے بننے میں مدد دیں اپنی بڑھتی ہوئی عمر کے بچوں کو قوت دیں انہیں بزرگان دین کے بارے میں اور اسلام کی بنیادی باتوں کا شعور دیں ان کی نصابی اور ہم نصاب سرگرمیوں میں ان کا ساتھ دیں جب وہ ٹی وی چینل کھولیں یا کمپیوٹر اور نیٹ وغیرہ کا استعمال کریں تو حتیٰ المقدور وقت ان کے ساتھ رہ کر گزاریں یہ آج کے بچے ہی ہیں جو کل کے اچھے معاشرے اور بہترین پاکستان کا مستقبل ہیں نپولین نے کیا خوب کہا تھا کہ ”تم مجھے اچھی مائیں دو میں تمہیں بہترین قوم دوں گا۔

آیئے ماضی اور  حال اور مستقبل کے آیئنے میں دیکھتے ہیں کہ کیا  ماں کا کردار اپنے فرض کو نبھا رہا ہے؟؟

ماں میں یہ دکھ کس سے کہوں کیا تو آج بھی میرا دکھ جاننے کی صلاحیت رکھتی ہے ؟ کیا آج کی ماں اولاد کا دکھ سمجھتی ہے؟میرا یہ سوال ماں سے ہے۔۔۔۔


HAMID ALI BELA - Maaye Ni Main Kino Aakhan... by muhammad-naseer1

+ How to Follow the New Added Discussions at Your Mail Address?

+ How to Join Subject Study Groups & Get Helping Material?

+ How to become Top Reputation, Angels, Intellectual, Featured Members & Moderators?

+ VU Students Reserves The Right to Delete Your Profile, If?


See Your Saved Posts Timeline

Views: 613

.

+ http://bit.ly/vucodes (Link for Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution)

+ http://bit.ly/papersvu (Link for Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More)

+ Click Here to Search (Looking For something at vustudents.ning.com?)

+ Click Here To Join (Our facebook study Group)

Reply to This

Replies to This Discussion

Bilkul sahi kaha saroosh ma'am , aj kal ki maye aisi hi hy , 

 

بہت اعلی' سروش سسٹر۔ 

sarosh ap halat ka jaiza bas aik he zaviay se la rai hain aj ka dor main bi asi maa ha jo aj bi apny se ziada apny bachon ko ahmiat dati ha us ki tarbiat wesay he karti ha jasa ka pichaly dore main mayen karti the lakin ye bi such ha ka asa boht kam daikha gia ha lakin aj bi asa ha 

Jee +✿✿SANA✿✿+ beshak aaj b aisi maayen hn. but boht kam hn.. Sarosh ny jin maaon ka zikr kia hy ajkal mostly maayen aisi he reh gai hn

اگر آج کے دور میں دیکھا جاۓ تو آجکل ماؤں مین وہ استقامت دیکھنے کو نھیں ملتی جو ایک قوم کی تخلیق کر سکے۔ آج کل کی ماؤں کی پاس اپنی زات کے علاوہ کسی اور کے لیۓ وقت ہی نہیں۔ وہ اپنی زات کے محور سے باہر نکلتی ہی نہیں۔ اور جب ایک ماں کے پاس اولاد کی تربیت کے لیے وقت ہی نہ ہو تو آنے والی بیٹیاں کیسی ہوگیں اسکا تصور تو ہم کر ہی سکتے ہیں۔

Zohra bohat aalaw observation hai apki, i word to word believe on your say. However, we are talking about the majority mothers. Zyda masla materialism hai, Mian BV dono ko zyda paisay or standard ki fikar hai or aulad se ghafil hain. Baki sarosh ne purani or ajkal ki maaon ka bohat aalaww comparison paish ker dia hai jo samajne walio k liye kafi hai

Shukriya BE.

Sarosh ny jo xomparison kia wo waqai smjhny k lye kafi hy

RSS

Latest Activity

UMER UMER posted a discussion
1 minute ago
Siddiq khan kakar replied to + M.Tariq Malik's discussion Instructions About Mid Papers For Newly Admitted Students:
21 minutes ago
Rana Ali commented on Isha Chuhdary's blog post Moka
30 minutes ago
Rana Ali liked Isha Chuhdary's blog post Moka
30 minutes ago
Butt G updated their profile
43 minutes ago
Rana Ali replied to Rana Ali's discussion تمہیں دل لگی بھول جانی پڑے گی
49 minutes ago
+ ! ❤SΕNSΙТΙVΕ(∂ΕSΕЯТ ΡЯΙNCΕSS)❤ replied to +¢αяєℓєѕѕ gιяℓ's discussion Galat fehmi..
59 minutes ago
+ ! ❤SΕNSΙТΙVΕ(∂ΕSΕЯТ ΡЯΙNCΕSS)❤ liked +¢αяєℓєѕѕ gιяℓ's discussion Galat fehmi..
1 hour ago
Profile Iconsanaakram, junaid farid, Sundas Shaban and 5 more joined Virtual University of Pakistan
1 hour ago
Mani Siddiqui BS VIII posted a status
"انسانی اِیجادات میں خطرناک ایجاد عارضی انسانی تعلقات ہیں"
6 hours ago
Madeha Naqvi liked fairy's discussion QUIZ NO 1:
7 hours ago
hafsa badar posted a discussion
7 hours ago

Today Top Members 

© 2019   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service

.