We are here with you hands in hands to facilitate your learning & don't appreciate the idea of copying or replicating solutions. Read More>>

Looking For Something at vustudents.ning.com? Click Here to Search

www.bit.ly/vucodes

+ Link For Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution

www.bit.ly/papersvu

+ Link For Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More


Dear Students! Share your Assignments / GDBs / Quizzes files as you receive in your LMS, So it can be discussed/solved timely. Add Discussion

How to Add New Discussion in Study Group ? Step By Step Guide Click Here.

نماز (قیام ) میں ہاتھ کھولنا یا باندھنا

مسلمان دن میں پانچ نمازیں پڑھتے ہیں، جہاں نماز میں مختلف فقہی اختلافات ہیں، وہیں ہاتھ کھول کر یا باندھ کر پڑھنے میں بھی اختلاف ہے۔


اہلِ تشیع کے ہاں معروف یہ ہے کہ ہاتھ کھول کر نماز پڑھنا فرض، پس باندھنا حرام اور مبطلِ نماز ہے یا صرف حرام جبکہ مبطلِ نماز نہیں، جبکہ غیر معروف رائے کی بناء پر کھولنا مستحب اور باندھنا مکروہ ہے۔ زیدیہ بھی ہاتھ کھول کر ہی نماز ادا کرتے ہیں۔ اباضیہ کا بھی یہی طریقہ ہے۔


جبکہ اہلِ سنت کے تین نظریات ہیں

ہاتھ کھول کر نماز پڑھنا افضل ہے، جبکہ باندھنا مکروہ، اس کے امام مالک قائل ہیں۔


 ہاتھ باندھ کر پڑھنا افضل، جبکہ کھولنا بھی جائز، اس کے احناف، شوافع اور حنابلہ قائل ہیں۔ اِن فقہاء کے نزدیک اس میں بھی اختلاف ہے کہ ہاتھ کہاں باندھے جائیں گے، بعض سینے پر جبکہ کچھ زیرِ ناف ہاتھ باندھنے کے قائل ہیں۔


 کچھ اہلِ سنت علماء کے نزدیک باندھنا و کھولنا دونوں برابر ہیں جیسے عطا اور امام اوزاعی۔


اہلِ تشیع، زیدیہ، مالکیہ اور اباضیہ ہاتھ کھول کر نماز پڑھتے ہیں، جبکہ صحابہ کرام کی ایک جماعت، بشمول حضرت علی و حضرت عبد اللہ بن زبیر کے، سے ہاتھ کھول کر نماز پڑھنا مروی ہے، جبکہ تابعین میں سے سعید بن مسیب، سعید بن جبیر، مجاہد، حسن بصری، ابراہیم نخعی اور ابن سیرین سے بھی ہاتھ کھول کر نماز پڑھنا مروی ہے۔ آئمہِ اہلِ بیت سے بھی ہاتھ کھولنا ہی مروی ہے، جیسا کہ علامہ وحید الزمان خان نے بھی تیسر الباری شرح صحیح بخاری میں تصریح کی ہے۔


اہلِ تشیع، زیدیہ، مالکیہ اور اباضیہ فقہاء کا کہنا ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سے ہاتھ باندھ کر نماز پڑھنا کسی صحیح حدیث سے ثابت نہیں ہے، جبکہ آپ سے ہاتھ کھول کر نماز پڑھنے کی روایات مذکور ہیں۔


جیسا کہ بخاری شریف میں اس طرح کے الفاظ ہیں " کان الناس یؤمر۔۔۔" کہ لوگوں کو ہاتھ باندھ کر نماز کا حکم دیا جاتا تھا، اب حکم کون دیتا تھا یہ صراحت نہیں، سو یہ حدیث مرفوع نہیں۔


ابو حازم تابعی اسے موقوف جانتا ہے۔ جبکہ اس روایت کے راوی امام مالک کے نزدیک باندھنا مکروہ ہے، لہذا یہ روایت لائقِ التفات نہیں۔


صحیح مسلم کی ایک روایت میں نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے ہاتھ باندھنے کی ایک روایت علقمہ بن وائل سے منقول ہے، انہوں نے اپنے باپ سے روایت کی جبکہ وہ اپنے باپ کی وفات کے چھ ماہ بعد پیدا ہوئے۔ امام نووی نے فرمایا کہ علقمہ کی اپنے باپ سے روایات مرسلہ جبکہ ان کا غلام مجہول ہے۔ ابنِ حجر فرماتے ہیں کہ علقمہ نے اپنے باپ سے نہیں سنا۔


جبکہ ابو داؤد، دارقطنی، نسائی اور ابن ماجہ کی سنن میں حضرت عبد اللہ بن مسعود کی روایت حجاج بن ابی زینب سے مروی ہے، یہ راوی ثقہ نہیں۔


سو اِن (مالکیہ، شیعہ اور اباضیہ) کے نزدیک نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کا ہاتھ باندھ کر نماز پڑھنا ثابت نہیں، اہلِ مدینہ ہاتھ کھول کر ہی نماز پڑھتے تھے تب ہی امام مالک نے اسے بہتر قرار دیا۔

اس کے مقابلے میں دیگر اہلِ سنت (شوافع، احناف اور حنابلہ) کا کہنا ہے کہ ہاتھ باندھنا صحیح احادیث سے ثابت ہے، ہاں واجب یا فرض نہیں ہے۔


کئی فقہاء نے یہ توجیہ پیش کی ہے کہ نماز ہاتھ کھول کر ہی پڑھنی چاہیے لیکن تھک جانے کی صورت میں ہاتھ پر ہاتھ رکھنے میں کوئی حرج نہیں، مالکی فقیہ شیخ مختار الداؤدی نے اس پر ایک کتاب بھی لکھی ہے " البراھین المستنابۃ فی ان وضع الیمنیٰ علی الیسریٰ للاستعانۃ "۔


نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے کئی سال دن میں پانچ مرتبہ نماز پڑھائی، لیکن اسلامی مسالک میں نماز کی کیفیت پر اتفاق نہیں پایا جاتا، ہاتھ کھولنے/ باندھنے کی کیفیت بھی یقینی نہیں ہے۔ کچھ کہتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم باندھتے تھے، کچھ کہتے ہیں کہ کھول کر پڑھا کرتے تھے، کچھ کہتے ہیں کہ دونوں طریقے ثابت ہیں، آپ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے باندھ اور کھول کر، ہر دو طرح پڑھی۔ ہاں بعض فقہاء کا کہنا ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ہاتھ کھول کر نماز پڑھا کرتے تھے، لیکن لمبے قیام کی وجہ سے کبھی ہاتھ پر ہاتھ رکھ لیتے۔


یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ نماز میں ہاتھ کھولنے یا باندھنے کا اختلاف کب سے شروع ہوا، وہ فقہاء جن کا دعویٰ ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ہاتھ کھول کر نماز پڑھتے تھے، وہ بھی یہ نشاندہی نہیں کر پائے کہ ہاتھ باندھنا کب اور کیسے رواج پا گیا، نیز جو فقہاء ہاتھ باندھنے ہی کو سنت جانتے ہیں وہ یہ نہیں بتا سکتے کہ کھولنے کا آغاز کب اور کیسے ہوا، لیکن اتنا ضرور ملتا ہے کہ حضرت علیؑ نماز میں ہاتھ باندھنے کو ناپسند کرتے اور اسے مجوسیوں کا طریقہ قرار دیکر ہاتھ کھلوا دیتے تھے، چنانچہ امام بخاری کے استاد ابن ابی شیبہ کی کتاب "المصنف" کو دیکھا جا سکتا ہے۔ مالکی، اباضی اور شیعہ فقہاء نے ہاتھ کھولنے کی افضلیت پر کئی کتابیں لکھی ہیں۔ حضرت سعید بن جبیر بھی ہاتھ کھلوا دیتے تھے۔


نتیجہ:

ہاتھ کھول کر یا باندھ کر نماز پڑھنا کوئی اتنا بڑا اختلافی مسئلہ نہیں ہے، ہاتھ کھول کر نماز پڑھنا سب مسلمان فرقوں کے نزدیک جائز ہے (کچھ کے نزدیک مستحب تو اہلِ تشیع کی معروف رائے اس کے وجوب کی ہے) جبکہ ہاتھ باندھ کر نماز پڑھنا کسی کے نزدیک واجب/ فرض نہیں ہے ( کچھ کے نزدیک بہتر، بعض کے نزدیک مکروہ تو اہلِ تشیع کی معروف رائے کے مطابق حرام ہے)۔ پس نماز دونوں طریقوں سے درست ہے، ہاتھ کھولے جائیں یا باندھے جائیں (اہلِ تشیع میں مشہور ہاتھ کھولنے کا وجوب جبکہ غیر معروف استحباب ہے، غیر معروف نظریہ کی بناء پر اُن کے نزدیک بھی دونوں طریقے درست قرار پائیں گے)۔

 

+ How to Follow the New Added Discussions at Your Mail Address?

+ How to Join Subject Study Groups & Get Helping Material?

+ How to become Top Reputation, Angels, Intellectual, Featured Members & Moderators?

+ VU Students Reserves The Right to Delete Your Profile, If?


See Your Saved Posts Timeline

Views: 326

.

+ http://bit.ly/vucodes (Link for Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution)

+ http://bit.ly/papersvu (Link for Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More)

+ Click Here to Search (Looking For something at vustudents.ning.com?)

+ Click Here To Join (Our facebook study Group)

Reply to This

Replies to This Discussion

g jnab ye kaha sy naqal kia huwa hain q k ye book jwab  b apney ko khud daiti hain.haat bandna koolna jes ki maslak ma hain wo wahi kr rahain hain.

..ہر وہ طریقہ قابل قبول ہے جسے  رسول ﷺ نے اپنایا...اب وہ چاہے دونوں ہوں یا ایک 
پس نماز دونوں طریقوں سے درست ہے، ہاتھ کھولے جائیں یا باندھے جائیں 

عورت مرد کی نماز میں فرق کے دلائل

میں نے پورے قرآن پاک میں قبول نماز کی دو ھے شرطیں

سمجھی ھے

خشوح۔ خضوع

باقی آ پ جیسے بھی پڑھے

RSS

Today Top Members 

© 2020   Created by +M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service

.