We are here with you hands in hands to facilitate your learning & don't appreciate the idea of copying or replicating solutions. Read More>>

Looking For Something at vustudents.ning.com? Click Here to Search

www.bit.ly/vucodes

+ Link For Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution

www.bit.ly/papersvu

+ Link For Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More


Dear Students! Share your Assignments / GDBs / Quizzes files as you receive in your LMS, So it can be discussed/solved timely. Add Discussion

How to Add New Discussion in Study Group ? Step By Step Guide Click Here.

نریندر مودی کی پاکستان کو دھمکیاں بھارتی ناکامیوں کا نوحہ ہے

بھارتی بحریہ کے حاضر سروس کمانڈر اور ’’را‘‘ کے ایجنٹ کلبھوشن یادیو کی گرفتاری اور اعتراف جرم کو کچھ زیادہ عرصہ نہیں گزرا ۔صرف 4ماہ پہلے مارچ کے آخرمیں کلبھوش ایران کے راستے پاکستان میں داخل ہوتے ہوئے ثبوتوں سمیت پکڑا گیا تھا۔کلبھوشن نے اس موقع پر پاکستان کے خلاف دہشت گردی کی کارروائیوں کے جوجو اقبالِ جرم کئے ۔۔۔بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے 15اگست کی دلی کے لال قلعہ کی تقریر میں ان سب جرائم پر مہر تصدیق ثبت کرتے ہوئے اعتراف کیا ہے کہ بھارت پاکستان میں دہشت گردی کی کارروائیوں میں ملوث ہے۔نریندر مودی کا کہنا تھا! ’’اب وقت آگیا ہے کہ بلوچستان،گلگت،بلتستان اور آزادکشمیر میں ہونے والے مظالم پرپاکستان سے جواب طلب کیا جائے۔ ان علاقوں کے لوگوں نے اپنے حق میں آواز اٹھانے پر میرا شکریہ ادا کیا ہے اور یہ بات میرے لئے باعث فخر ہے کہ انہوں نے ہم سے مدد طلب کی ہے‘‘۔۔۔ہم سمجھتے ہیں کہ مودی کی یہ تقریر پاکستان توڑنے کی کوششوں کا باضابطہ اعتراف جرم ہی نہیں ،بلکہ پاکستان کے خلاف کھلا اعلانِ جنگ اور پاکستان کے بارے میں مستقبل کے ناپاک عزائم کا اظہار بھی ہے۔
یہ تقریر اس بات کااقرار بھی ہے کہ بلوچستان سمیت پاکستان میں جہاں بھی دہشت گردی کی کارروائیاں ہو رہی ہیں، ان میں بھارت براہ راست ملوث ہے اور یہ کہ بھارت مستقبل میں پاکستان کے خلاف دہشت گردی کی جنگ مزید بھڑکانے کا ارادہ رکھتا ہے۔بھاتی وزیراعظم کو یہ نہیں بھولنا چاہئے کہ جس لال قلعہ کی فصیل کے پیچھے کھڑے ہوکر انہوں نے پاکستان کو للکارنے، ڈرانے اور دھمکانے کی ناکام کوشش کی وہ لال قلعہ ۔۔۔دُنیا میں مسلمانوں کی عظمت رفتہ کا امین بھی ہے اور مسلمانوں کی امانت بھی ہے۔ پاکستان کو للکارنے سے پہلے بہتر تھا کہ۔۔۔مودی لال قلعہ کی پُر ہیبت فصیلوں اور پُرشکوہ برجوں پر کنندہ تاریخ پڑھ لیتے۔ شہاہ جہاں کے تعمیر کردہ لال قلعہ کے مقابل دلی کی پُرشکوہ لال مسجد ایستادہ ہے۔تاریخ کا طالب علم خوب جانتا ہے کہ مسلمانوں کا بدترین دشمن اور مرہٹہ سلطنت کا بانی شیواجی مہاراج مسلمانوں کا نام ونشان تک مٹاڈالنے اور قدیم ہندو سلطنت کی بحالی کا خواب لے کر اٹھا تھا، وہ لال مسجد میں مہا دیو کا بت نصب کرکے اسے مندر بنانا اور اذان کی جگہ گھنٹیاں بجاناچاہتا تھا۔ تب اسی لال قلعہ کے معمارشاہ جہاں کے بیٹے اورنگزیب عالمگیرنے شیواجی کو شکست فاش سے دوچار کیاتھا۔یہی لال قلعہ ہے جس میں انگریز مسلمانوں پر ظلم کا راج قائم رکھنے کے خواب دیکھا کرتے تھے، لیکن آخر کار مسلمانوں پر ظلم کا راج مسلط کرنے کے خواب دیکھنے والوں کا اپنا راج ختم ہو گیا۔لال قلعہ پر اگر انگریز کے ظلم کاراج نہیں رہا تو برہمن کے ظلم کا راج بھی نہیں رہے گا۔ انشا اللہ۔
آج ہمارے حکمران،سیاستدان اور عوام نہیں جانتے کہ مسلمانوں کا بدترین دشمن شیوا جی مرہٹہ نریندر مودی کا آئیڈیل ہے۔۔۔شیوا۔۔۔مسلمانوں پر ظلم وستم ڈھانے اور ان کا نام ونشان مٹانے میں جس قدر جنونی تھا، اس سے کہیں بڑھ کر وہ مکروفریب میں اپنی مثال آپ تھا۔اس کی مکاری کا اندازہ اس سے کیا جاسکتا ہے کہ ریاست بیجاپو ر کے سلطان عادل شاہ کے نہایت ہی جری اور بہادر سپہ سالار افضل خان نے شیوا جی کو شکست پر شکست دی۔تب شیوا ہتھیار ڈالنے پر مجبور ہوگیا،لیکن ساتھ ہی ملاقات کی خواہش کااظہار بھی کیا۔جب وہ افضل خان کے ساتھ ملاقات کے لئے پہنچا تو ایک میل پیچھے ہی گھوڑے سے اتر گیااور جھک جھک کرپرنام کرتے ہوئے آگے بڑھنے لگا۔افضل خان شیوا جی کی عاجزی سے بہت متاثر ہوا۔تب وہ آگے بڑھا اور جھکے ہوئے شیواکوسیدھاکیااور نہایت محبت سے گلے لگایا۔ جیسے ہی شیوا افضل خان کے لگے لگا شیوا کی ۔۔۔بغل میں چھپا زہریلا خنجر افضل خان کی پشت میں اتر گیا تھا۔ نریندر مودی اسی شیوا جی کو اپنا آئیڈیل سمجھتے اور اس کے طریقہ واردات سے متاثر ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ کچھ عرصہ پہلے تک جب وہ پاکستان آتے توچہرے پر بظاہر نرم مسکراہٹ سجائے پرنام کرتے اورنہایت ادب واحترام سے تحفے تحائف کے تبادلے کرتے تھے۔اس دوران یوں معلوم ہوتا، جیسے مودی کے دل میں پاکستانیوں کے لئے پیارو محبت کا ٹھاٹیں مارتاسمندر موجزن ہے۔ ایک طرف یہ محبتیں تھیں اور دوسری طرف پاکستان کی جڑیں کاٹنے کے لئے کلبھوشن جیسے ’’ را‘‘ کے ایجنٹ اور دہشت گرد پاکستان بھیجے جارہے تھے۔اس کے بعد جب کلبھوشن کا سارے کا سارا نیٹ ورک پکڑا گیا، پاکستان استحکام کی راہ پر گامزن ہوگیا،سی پیک پراجیکٹ تعمیر کے مراحل طے کرنے لگا،مقبوضہ جموں و کشمیر پر بھارتی قبضہ ڈھلتی چھاؤں بننے لگا ہے تو مودی سمیت بھارتی پالیسی سازوں کو یقین ہو گیا کہ پاکستان کے خلاف ان کی سازشیں ناکام ہو گئی ہیں۔۔۔نریندر مودی کی 15اگست کی ہفوات دراصل پاکستان کے خلاف بھارت کی انہیں نا کا میوں کا نوحہ ہیں۔
سچی بات یہ ہے کہ مودی کی ساری تقریر ناکامیوں کی کھلی داستان اورخرافات کا مجموعہ تھی۔۔۔ مثلاًانہوں نے اپنی تقریر میں کہا: ’’پاکستان میں دہشت گردی کے نظریئے پروان چڑھائے جاتے ہیں‘‘۔۔۔ لیکن حیرت ہے اس موقع پر وہ7جون 2015ء کادورۂ بنگلہ دیش بھول گئے جو انہوں نے پاکستان کو توڑنے اوربنگلہ دیش بنانے میں بھارتی کردار کے اعتراف وخدمات کے حوالے سے کیا تھا۔اس موقع پر مودی نے جو گفتگوکی، اس کا ایک ایک لفظ پاکستان دشمنی میں ڈوبا ہوا تھا۔مودی کا کہنا تھا:’’بنگلہ دیش کی آزادی میں بھارتی فوجیوں کا خون بھی شامل ہے،ہمارے لوگوں نے بھی بنگلہ دیشیوں کے کندھے سے کندھا ملا کر جدوجہد کی،ہم مکتی باہنی کے ساتھ مل کر لڑے،ہمارے فوجیوں کے علاوہ عام ہندؤو ں کا بھی بنگلہ دیش بنانے(پاکستا ن توڑنے ) میں حصہ ہے ۔بنگلہ دیش بنانے (پاکستان توڑنے کی تحریک) میں میں نے بھی بطور رضاکار حصہ لیا۔مودی نے اس دوران پاکستان توڑنے کی پرانی یادوں اور باتوں کو دھر اتے ہوئے یہ بھی بتایا۔۔۔ ’’واجپائی نے اس کارنامے (پاکستان توڑنے) پر اندرا گاندھی کو درگا میئتا کا خطاب دیا تھا‘‘۔۔۔ اسی طرح نریندر مودی نے 15اگست کی تقریر میںآرمی پبلک سکول پشاور میں ہونے والی دہشت گردی کے واقعہ پر بھارتی پارلیمنٹ میں ٹسوئے بہائے جانے کا ذکر تو کیا، لیکن 31مارچ1971ء کے موقع پرانداراگاندھی نے بھارتی راجیہ سبھا(سینیٹ)اور لوک سبھا(قومی اسمبلی) کے دونوں ایوانوں سے پاکستان توڑنے کے لئے فیصلہ کن کردار اداکرنے کی جومتفقہ قرارداد منظور کروائی تھی، اس کا ذکر کیوں بھول گئے۔۔۔؟
اصل بات یہ ہے کہ بھارت ایک بار پھر مشرقی پاکستان کی تاریخ دھرانے کے خواب دیکھ رہا ہے ،لیکن اسے سمجھ لینا چاہئے کہ آج کا پاکستان 1971ء سے بالکل مختلف ہے۔ آج اسے کوئی شیخ مجیب الرحمن نہیں ملے گا۔آج وطن کا بچہ بچہ پاکستان کی حفاظت کی خاطر کٹ مرنے کے لئے افواج پاکستان کے شانہ بشانہ ہے۔مودی کے بیان کے خلاف بلوچستان،آزادکشمیر اور گلگت بلتستان کے عوام سراپا احتجاج ہیں۔ادھر مقبوضہ جموں و کشمیر آتش فشاں بنا ہواہے۔اصل بات یہ ہے کہ بھارت پاکستان کے خلاف کی جانے والی سازشوں کے ناکام ہونے، مقبوضہ وادی میں آزادی کی تحریک مستحکم ہونے، پاکستانی پرچم لہرائے جانے،پاکستان زندہ باد کے نعرے لگنے، مسئلہ کشمیر پر پاکستان کے مضبوط موقف اور آئندہ ماہ پاکستان کی طرف سے سلامتی کونسل میں مسئلہ کشمیر کے اٹھائے جانے کے فیصلے سے بوکھلا گیا ہے، اس وجہ سے اب اس نے پاکستان پر لایعنی الزام تراشیوں کا سلسلہ شروع کردیا ہے۔بھارت اس وقت مقبوضہ وادی میں آزادی کی تحریک دبانے کے لئے بے دریغ طاقت استعمال کررہا ہے، لیکن بھا رت کو جان لینا چاہئے کہ آزادی کی تحریک طاقت سے دبنے والی ہوتی تو کب کی قصہ ماضی بن چکی ہوتی اور آج وادی۔۔۔شعلہ جوالہ نہ بنی ہوتی۔
80لاکھ آبادی والے خطے پر8لاکھ فوج پہلے ہی تعینات ہے۔اس کا مطلب ہے کہ ہر دس کشمیریوں پر ایک مسلح بھارتی فوجی بندوق تانے کھڑا ہے۔اب بھارت نے وادی میں مزیددس ہزار فوج اتاردی ہے۔ اتنی کم آبادی والے خطے میں اتنی بڑی تعداد میں فوج کی تعیناتی کی دنیا میں اور کوئی مثال نہیں ملتی ہے۔ اس کے باوجود آزادی کی تحریک مضبوط سے مضبوط تر ہو رہی ہے۔اہلِ کشمیر پاکستان کے ساتھ محبت کی لازوال داستانیں خون جگر سے رقم کررہے ہیں۔سچی بات یہ ہے کہ اس وقت ریاست جموں وکشمیر کا پوراخطہ تحریک پاکستان کے ایمان افروز مناظر کی یادیں تازہ کررہا ہے۔ 1947ء میں بھی سبز ہلالی پرچم لہرائے جاتے اور ’’بٹ کے رہے گا ہندوستان، بن کے رہے گا پاکستان‘‘ کے نعرے لگتے تھے۔آج بھی مقبوضہ وادی میں سبز ہلالی پرچم لہرا رہے اور کشمیر بنے گا پاکستان کے نعرے لگ رہے ہیں۔ظلم اس وقت بھی کیا جاتا تھا،لاٹھیاں برستیں، گولیاں چلتیں،مسلمانوں کے سینوں میں سنگینیں اترتیں، لاشیں چھلنی ہوتیں،عزتیں پامال ہوتیں،خواتین بیوہ اور بچے یتیم ہوتے۔۔۔مسلمانوں کو ہمیشہ کے لئے غلام بنائے رکھنے اور رام راج کے تسلط کے منصوبے بنائے جاتے۔۔۔لیکن ہوا کیا۔۔۔برہمن کا ظلم جیسے جیسے بڑھتا چلا گیا، آزادی کی تحریک میں شدت پیدا ہوتی چلی گئی۔ آخر وہ دن بھی آپہنچا جب برہمن اور انگریز کا حد سے بڑھتا ہوا ظلم ہندوستان ٹوٹنے اور قیام پاکستان کا باعث بن گیا ۔سو ۔۔۔آج بھی علی وجہ البصیرت کہا جا سکتا ہے کہ جیسا شیواجی خاک چاٹنے پر مجبور ہوا، ایسے ہی نریندر مودی بھی ناکامی سے دوچار ہوں گے۔ ان کا حد سے بڑھتا ہوا انتہا پسندانہ اور متشددانہ رویہ بھارت کے مزیدحصے بخرے اور مقبوضہ جموں وکشمیر کی آزادی کا باعث بنے گا، انشا اللہ۔

Source

+ How to Follow the New Added Discussions at Your Mail Address?

+ How to Join Subject Study Groups & Get Helping Material?

+ How to become Top Reputation, Angels, Intellectual, Featured Members & Moderators?

+ VU Students Reserves The Right to Delete Your Profile, If?


See Your Saved Posts Timeline

Views: 90

.

+ http://bit.ly/vucodes (Link for Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution)

+ http://bit.ly/papersvu (Link for Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More)

+ Click Here to Search (Looking For something at vustudents.ning.com?)

+ Click Here To Join (Our facebook study Group)

Reply to This

Latest Activity

+ ! ! ! ! ! branded billi ! ! + replied to + ! ! ! ! ! branded billi ! ! +'s discussion azaadi mubarak
37 minutes ago
Abdul Hadi replied to + ! ! ! ! ! branded billi ! ! +'s discussion azaadi mubarak
1 hour ago
+ ! ! ! ! ! branded billi ! ! + commented on M r . H a a D i . . . ! ! !'s blog post ACHA SORRY...!!!
1 hour ago
+ ! ! ! ! ! branded billi ! ! + posted a discussion
1 hour ago
++*S͓̽o͓̽m͓̽i͓̽ V͓̽i͓̽r͓̽k͓̽*++ updated their profile
1 hour ago
Mani Siddiqui BS VIII posted a status
"" ایک سلجھا ہوا انسان۔ ۔ بلا وجہ کڑوے۔ ۔ اور تلخ لہجہ میں بات نہیں کرتا۔ ۔ اس کے پیچھے ایک کہانی ہوتی ہے"
2 hours ago
乇メ-丂イひり3刀イ. liked zohaib iftikhar's blog post ...* DOST ...*
2 hours ago
+ ! ! ! ! ! ! ! Captain+ liked Isha Chuhdary's discussion Bari
5 hours ago
+ ! ! ! ! ! ! ! Captain+ liked Isha Chuhdary's discussion Bari
5 hours ago
+ ! ! ! ! ! ! ! Captain+ liked +Аүмаи+'s discussion ذرا ذرا سے منافق تو سارے ھوتے ہیں
5 hours ago
+ ! ! ! ! ! ! ! Captain+ liked +++A++R+++'s discussion رشتے
5 hours ago
+ ! ! ! ! ! ! ! Captain+ liked Mani Siddiqui BS VIII's discussion Allah o Akbar| Pakistan Air Force Song |27 Feb 2020
5 hours ago

© 2020   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service

.