.... How to Find Your Subject Study Group & Join ....   .... Find Your Subject Study Group & Join ....  

We are here with you hands in hands to facilitate your learning & don't appreciate the idea of copying or replicating solutions. Read More>>

Study Groups By Subject code Wise (Click Below on your university link & Join Your Subject Group)

[ + VU Study Groups Subject Code Wise ]  [ + COMSATS Virtual Campus Study Groups Subject Code Wise ]

Looking For Something at vustudents.ning.com?Search Here

ساری نماز عربی میں اور نیت اردو میں

بسم الله الرحمن الرحیم
سب طرح کی تعریفیں الله تعالیٰ کے لیے ہیں جو تمام جہانوں کا رب ہے ۔ الله اکیلا ساری کائنات کا خالق اور مالک ہے ۔ الله بے نیاز ہے ۔ سب الله کے محتاج ہیں ۔ الله کی برابری کا کوئی نہیں ہے اور درود و سلام ہو الله کے تمام رسولوں پر امابعد کہ بہترین بات اللہ کی کتاب ہے اور بہترین سیرت محمد (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی سیرت ہے اور سارے کاموں میں بدترین کام نئے نئے طریقے ہیں (یعنی دین کے نام سے نئے طریقے جاری کرنا) اور ہر بدعت گمراہی ہے ۔
قارئین ! جیسا کہ آجکل ہر طرف فرقہ واریت پھیلی ہوئی ہے اور اس صورت حال میں لوگ تحقیق کرنا چھوڑ گئے ہیں اور انہوں نے تقلید کو اختیار کر لیا ہے ۔ کچھ چیزیں لوگوں میں اس قدر رائج ہو گئی ہیں کہ ان کا چھوڑنا انھیں بہت دشوار ہوتا ہے . قارئین ! آج آپ کے سامنے ایک ایسی ہی بات رکھی جائے گی ۔ . قارئین ! جیسا کہ ہر کام کرنے سے پہلے نیت ہوتی ہے . نیت دل میں ہوتی ہے . اور یہ دوسرے لوگوں سے پوشیدہ ہوتی ہے. لیکن مقلدین نے زبان سے بول کر نیت کرنے کی عجیب بدعت ایجاد کی . قارئین ! آج ہم دیکھیں گے کہ مقلدین خود اس بات پر کتنا عمل کرتے ہیں . مقلدین نے نماز شروع کرنے سے پہلے منہ سے نیت کرنے کو لازم قرار دیا . اس کے الفاظ بھی اپنی اپنی زبان میں انہوں نے بنائے . قارئین ! ویسے تو اس کے بدعت ہونے کا یہیں سے پتا چل جاتا ہے کہ ساری نماز عربی میں اور نیت اپنی زبان میں . جیسے اردو ، پنجابی وغیرہ
لیکن ہم آپ کے سامنے کچھ ایسی غور طلب باتیں رکھیں گے جو آپ کو اس کی حقیقت سے آگاہ کردیں گیں . ان شاء الله . قارئین کیا آپ نے کبھی کمپیوٹر چلانے سے پہلے یہ کہا ہے کہ میں نیت کرتا ہوں کمپیوٹر چلانے کی ؟ یا آپ نے موبائل چلانے سے پہلے کہا ہو کہ میں نیت کرتا ہوں موبائل چلانے کی ؟ یقیناً نہیں کہا ہو گا . تو کیا آپ کی نیت نہیں ہوتی ؟ قارئین ! آپ کو ایک اور پہلو سے سمجھانے کی کوشش کرتے ہیں .حَدَّثَنَا الْحُمَيْدِيُّ قَالَ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ قَالَ حَدَّثَنَا يَحْيَی بْنُ سَعِيدٍ الْأَنْصَارِيُّ قَالَ أَخْبَرَنِي مُحَمَّدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ التَّيْمِيُّ أَنَّهُ سَمِعَ عَلْقَمَةَ بْنَ وَقَّاصٍ اللَّيْثِيَّ يَقُولُ سَمِعْتُ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ عَلَی الْمِنْبَرِ يَقُولُ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ إِنَّمَا الْأَعْمَالُ بِالنِّيَّاتِ وَإِنَّمَا لِامْرِئٍ مَا نَوَی فَمَنْ کَانَتْ هِجْرَتُهُ إِلَی دُنْيَا يُصِيبُهَا أَوْ إِلَی امْرَأَةٍ يَنْکِحُهَا فَهِجْرَتُهُ إِلَی مَا هَاجَرَ إِلَيْهِ
صحیح بخاری:جلد اول:حدیث نمبر 1
حمیدی، سفیان، یحیی بن سعید انصاری، محمد بن ابراہیم تیمی، علقمہ بن وقاص لیثی سے روایت کرتے ہیں کہ وہ فرماتے ہیں میں نے حضرت عمر بن خطاب (رض) کو منبر پر فرماتے ہوئے سنا کہ میں نے رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کو یہ فرماتے ہوئے سنا کہ اعمال کے نتائج نیتوں پر موقوف ہیں اور ہر آدمی کو وہی ملے گا جس کی اس نے نیت کی، چنانچہ جس کی ہجرت دنیا کے لئے ہو کہ وہ اسے پائے گا، یا کسی عورت کے لئے ہو، کہ اس سے نکاح کرے تو اس کی ہجرت اسی چیز کی طرف شمار ہوگی جس کے لئے ہجرت کی ہو۔
قارئین ! اس حدیث پر غور کریں . اس میں سارے اعمال کے نتائج نیتوں پر موقوف ہونے کی صاف دلیل موجود ہے . اب اگر مقلدین کے نزدیک نیت منہ سے بول کر ہوتی ہے (جیسا کہ وہ نماز میں کرتے ہیں ) تو ہم کہیں گے کہ تمہارا وضو بھی ناقص رہا کیونکہ نیت زبان سے ہونی تھی تو وضو میں نیت زبان سے کیوں نہیں کی ؟ وضو میں کیوں نہیں کہا کہ میں نیت کرتا ہوں ، وضو کی، ، سامنے ہے پیتل کی ٹوٹی ،کھارا ہے پانی ، وغیرہ
چلیں آپ نے کبھی قرآن پڑھنے سے پہلے منہ سے کہا ہو ، میں نیت کرتا ہوں قرآن پڑھنے کی ؟
چلیں آپ نے کبھی کوئی گناہ کرنے سے پہلے کہا ہو کہ میں نیت کرتا ہوں فلاں گناہ کرنے کی؟ یقیناً کبھی نہیں کہا . جب یہاں بغیر زبان سے کہے نیت ہو جاتی ہے تو نماز میں کیوں نہیں ہوتی ؟
چلیں ایک اور پہلو سے سمجھتے ہیں . ایک لمبی حدیث نبوی ہے .

حَدَّثَنَا سُوَيْدُ بْنُ نَصْرٍ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ الْمُبَارَكِ، أَخْبَرَنَا حَيْوَةُ بْنُ شُرَيْحٍ، أَخْبَرَنِي الْوَلِيدُ بْنُ أَبِي الْوَلِيدِ أَبُو عُثْمَانَ الْمَدَائِنِيُّ،‏‏‏‏ أَنَّ عُقْبَةَ بْنَ مُسْلِمٍ حَدَّثَهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ شُفَيًّا الْأَصْبَحِيَّ حَدَّثَهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ دَخَلَ الْمَدِينَةَ فَإِذَا هُوَ بِرَجُلٍ قَدِ اجْتَمَعَ عَلَيْهِ النَّاسُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَنْ هَذَا؟ فَقَالُوا:‏‏‏‏ أَبُو هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏فَدَنَوْتُ مِنْهُ حَتَّى قَعَدْتُ بَيْنَ يَدَيْهِ وَهُوَ يُحَدِّثُ النَّاسَ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا سَكَتَ وَخَلَا قُلْتُ لَهُ:‏‏‏‏ أَنْشُدُكَ بِحَقٍّ وَبِحَقٍّ لَمَا حَدَّثْتَنِي حَدِيثًا سَمِعْتَهُ مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَقَلْتَهُ وَعَلِمْتَهُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ أَبُو هُرَيْرَةَ:‏‏‏‏ أَفْعَلُ لَأُحَدِّثَنَّكَ حَدِيثًا حَدَّثَنِيهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَقَلْتُهُ وَعَلِمْتُهُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ نَشَغَ أَبُو هُرَيْرَةَ نَشْغَةً فَمَكَثَ قَلِيلًا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَفَاقَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَأُحَدِّثَنَّكَ حَدِيثًا حَدَّثَنِيهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي هَذَا الْبَيْتِ مَا مَعَنَا أَحَدٌ غَيْرِي وَغَيْرُهُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ نَشَغَ أَبُو هُرَيْرَةَ نَشْغَةً أُخْرَى، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَفَاقَ فَمَسَحَ وَجْهَهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَأُحَدِّثَنَّكَ حَدِيثًا حَدَّثَنِيهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏وَأَنَا وَهُوَ فِي هَذَا الْبَيْتِ مَا مَعَنَا أَحَدٌ غَيْرِي وَغَيْرُهُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ نَشَغَ أَبُو هُرَيْرَةَ نَشْغَةً أُخْرَى، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَفَاقَ وَمَسَحَ وَجْهَهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ أَفْعَلُ لَأُحَدِّثَنَّكَ حَدِيثًا حَدَّثَنِيهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَنَا مَعَهُ فِي هَذَا الْبَيْتِ مَا مَعَهُ أَحَدٌ غَيْرِي وَغَيْرُهُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ نَشَغَ أَبُو هُرَيْرَةَ نَشْغَةً شَدِيدَةً، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ مَالَ خَارًّا عَلَى وَجْهِهِ فَأَسْنَدْتُهُ عَلَيَّ طَوِيلًا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَفَاقَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ " حَدَّثَنِي رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ اللَّهَ تَبَارَكَ وَتَعَالَى إِذَا كَانَ يَوْمُ الْقِيَامَةِ يَنْزِلُ إِلَى الْعِبَادِ لِيَقْضِيَ بَيْنَهُمْ وَكُلُّ أُمَّةٍ جَاثِيَةٌ فَأَوَّلُ مَنْ يَدْعُو بِهِ رَجُلٌ جَمَعَ الْقُرْآنَ، ‏‏‏‏‏‏وَرَجُلٌ قُتِلَ فِي سَبِيلِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏وَرَجُلٌ كَثِيرُ الْمَالِ، ‏‏‏‏‏‏فَيَقُولُ اللَّهُ لِلْقَارِئِ:‏‏‏‏ أَلَمْ أُعَلِّمْكَ مَا أَنْزَلْتُ عَلَى رَسُولِي؟ قَالَ:‏‏‏‏ بَلَى يَا رَبِّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَمَاذَا عَمِلْتَ فِيمَا عُلِّمْتَ؟ قَالَ:‏‏‏‏ كُنْتُ أَقُومُ بِهِ آنَاءَ اللَّيْلِ وَآنَاءَ النَّهَارِ، ‏‏‏‏‏‏فَيَقُولُ اللَّهُ لَهُ:‏‏‏‏ كَذَبْتَ، ‏‏‏‏‏‏وَتَقُولُ لَهُ الْمَلَائِكَةُ:‏‏‏‏ كَذَبْتَ، ‏‏‏‏‏‏وَيَقُولُ اللَّهُ لَهُ:‏‏‏‏ بَلْ أَرَدْتَ أَنْ يُقَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ فُلَانًا قَارِئٌ فَقَدْ قِيلَ ذَاكَ، ‏‏‏‏‏‏وَيُؤْتَى بِصَاحِبِ الْمَالِ فَيَقُولُ اللَّهُ لَهُ:‏‏‏‏ أَلَمْ أُوَسِّعْ عَلَيْكَ حَتَّى لَمْ أَدَعْكَ تَحْتَاجُ إِلَى أَحَدٍ؟ قَالَ:‏‏‏‏ بَلَى يَا رَبِّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَمَاذَا عَمِلْتَ فِيمَا آتَيْتُكَ؟ قَالَ:‏‏‏‏ كُنْتُ أَصِلُ الرَّحِمَ وَأَتَصَدَّقُ، ‏‏‏‏‏‏فَيَقُولُ اللَّهُ لَهُ:‏‏‏‏ كَذَبْتَ، ‏‏‏‏‏‏وَتَقُولُ لَهُ الْمَلَائِكَةُ:‏‏‏‏ كَذَبْتَ، ‏‏‏‏‏‏وَيَقُولُ اللَّهُ تَعَالَى:‏‏‏‏ بَلْ أَرَدْتَ أَنْ يُقَالَ:‏‏‏‏ فُلَانٌ جَوَادٌ فَقَدْ قِيلَ ذَاكَ، ‏‏‏‏‏‏وَيُؤْتَى بِالَّذِي قُتِلَ فِي سَبِيلِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏فَيَقُولُ اللَّهُ لَهُ:‏‏‏‏ فِي مَاذَا قُتِلْتَ؟ فَيَقُولُ:‏‏‏‏ أُمِرْتُ بِالْجِهَادِ فِي سَبِيلِكَ فَقَاتَلْتُ حَتَّى قُتِلْتُ، ‏‏‏‏‏‏فَيَقُولُ اللَّهُ تَعَالَى لَهُ:‏‏‏‏ كَذَبْتَ، ‏‏‏‏‏‏وَتَقُولُ لَهُ الْمَلَائِكَةُ:‏‏‏‏ كَذَبْتَ، ‏‏‏‏‏‏وَيَقُولُ اللَّهُ:‏‏‏‏ بَلْ أَرَدْتَ أَنْ يُقَالَ:‏‏‏‏ فُلَانٌ جَرِيءٌ، ‏‏‏‏‏‏فَقَدْ قِيلَ ذَاكَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ ضَرَبَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَلَى رُكْبَتِي، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا أَبَا هُرَيْرَةَ أُولَئِكَ الثَّلَاثَةُ أَوَّلُ خَلْقِ اللَّهِ تُسَعَّرُ بِهِمُ النَّارُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ "،‏‏‏‏ وَقَالَ الْوَلِيدُ أَبُو عُثْمَانَ:‏‏‏‏ فَأَخْبَرَنِي عُقْبَةُ بْنُ مُسْلِمٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ شُفَيًّا هُوَ الَّذِي دَخَلَ عَلَى مُعَاوِيَةَ فَأَخْبَرَهُ بِهَذَا، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو عُثْمَانَ، ‏‏‏‏‏‏وَحَدَّثَنِي الْعَلَاءُ بْنُ أَبِي حَكِيمٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ كَانَ سَيَّافًا لِمُعَاوِيَةَ، ‏‏‏‏‏‏فَدَخَلَ عَلَيْهِ رَجُلٌ فَأَخْبَرَهُ بِهَذَا، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ مُعَاوِيَةُ:‏‏‏‏ قَدْ فُعِلَ بِهَؤُلَاءِ هَذَا، ‏‏‏‏‏‏فَكَيْفَ بِمَنْ بَقِيَ مِنَ النَّاسِ ثُمَّ بَكَى مُعَاوِيَةُ بُكَاءً شَدِيدًا حَتَّى ظَنَنَّا أَنَّهُ هَالِكٌ، ‏‏‏‏‏‏وَقُلْنَا:‏‏‏‏ قَدْ جَاءَنَا هَذَا الرَّجُلُ بِشَرٍّ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَفَاقَ مُعَاوِيَةُ وَمَسَحَ عَنْ وَجْهِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ صَدَقَ اللَّهُ وَرَسُولُهُ مَنْ كَانَ يُرِيدُ الْحَيَاةَ الدُّنْيَا وَزِينَتَهَا نُوَفِّ إِلَيْهِمْ أَعْمَالَهُمْ فِيهَا وَهُمْ فِيهَا لا يُبْخَسُونَ ‏‏‏‏ 15 ‏‏‏‏ أُولَئِكَ الَّذِينَ لَيْسَ لَهُمْ فِي الآخِرَةِ إِلا النَّارُ وَحَبِطَ مَا صَنَعُوا فِيهَا وَبَاطِلٌ مَا كَانُوا يَعْمَلُونَ ‏‏‏‏ 16 ‏‏‏‏ سورة هود آية 15-16،‏‏‏‏ قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ غَرِيبٌ.
عقبہ بن مسلم سے شفیا اصبحی نے بیان کیا کہ ایک مرتبہ وہ مدینہ میں داخل ہوئے، اچانک ایک آدمی کو دیکھا جس کے پاس کچھ لوگ جمع تھے، انہوں نے پوچھا کہ یہ کون ہیں؟ لوگوں نے جواباً عرض کیا: یہ ابوہریرہ رضی الله عنہ ہیں، شفیا اصبحی کا بیان ہے کہ میں ان کے قریب ہوا یہاں تک کہ ان کے سامنے بیٹھ گیا اور وہ لوگوں سے حدیث بیان کر رہے تھے، جب وہ حدیث بیان کر چکے اور تنہا رہ گئے تو میں نے ان سے کہا: میں آپ سے اللہ کا باربار واسطہ دے کر پوچھ رہا ہوں کہ آپ مجھ سے ایسی حدیث بیان کیجئے جسے آپ نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا ہو اور اسے اچھی طرح جانا اور سمجھا ہو۔ ابوہریرہ رضی الله عنہ نے فرمایا: ٹھیک ہے، یقیناً میں تم سے ایسی حدیث بیان کروں گا جسے مجھ سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیان کیا ہے اور میں نے اسے اچھی طرح جانا اور سمجھا ہے۔ پھر ابوہریرہ نے زور کی چیخ ماری اور بیہوش ہو گئے، تھوڑی دیر بعد جب افاقہ ہوا تو فرمایا: یقیناً میں تم سے وہ حدیث بیان کروں گا جسے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھ سے اسی گھر میں بیان کیا تھا جہاں میرے سوا کوئی نہیں تھا، پھر دوبارہ ابوہریرہ نے چیخ ماری اور بیہوش ہو گئے، پھر جب افاقہ ہوا تو اپنے چہرے کو پونچھا اور فرمایا: ضرور میں تم سے وہ حدیث بیان کروں گا جسے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھ سے بیان کیا ہے اور اس گھر میں میرے اور آپ کے سوا کوئی نہیں تھا، پھر ابوہریرہ نے زور کی چیخ ماری اور بیہوش ہو گئے، اپنے چہرے کو پونچھا اور پھر جب افاقہ ہوا تو فرمایا: ضرور میں تم سے وہ حدیث بیان کروں گا جسے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھ سے بیان کیا ہے اور اس گھر میں میرے اور آپ کے سوا کوئی نہیں تھا، پھر ابوہریرہ نے زور کی چیخ ماری اور بیہوش ہو کر منہ کے بل زمین پر گر پڑے، میں نے بڑی دیر تک انہیں اپنا سہارا دیئے رکھا پھر جب افاقہ ہوا تو فرمایا: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھ سے یہ حدیث بیان کی ہے: ”قیامت کے دن جب ہر امت گھٹنوں کے بل پڑی ہو گی تو اللہ تعالیٰ اپنے بندوں کے درمیان فیصلے کے لیے نزول فرمائے گا، پھر اس وقت فیصلہ کے لیے سب سے پہلے ایسے شخص کو بلایا جائے گا جو قرآن کا حافظ ہو گا، دوسرا شہید ہو گا اور تیسرا مالدار ہو گا، اللہ تعالیٰ حافظ قرآن سے کہے گا: کیا میں نے تجھے اپنے رسول پر نازل کردہ کتاب کی تعلیم نہیں دی تھی؟ وہ کہے گا: یقیناً اے میرے رب! اللہ تعالیٰ فرمائے گا جو علم تجھے سکھایا گیا اس کے مطابق تو نے کیا عمل کیا؟ وہ کہے گا: میں اس قرآن کے ذریعے راتوں دن تیری عبادت کرتا تھا، اللہ تعالیٰ فرمائے گا: تو نے جھوٹ کہا اور فرشتے بھی اس سے کہیں گے کہ تو نے جھوٹ کہا، پھر اللہ تعالیٰ کہے گا: (قرآن سیکھنے سے)تیرا مقصد یہ تھا کہ لوگ تجھے قاری کہیں، سو تجھے کہا گیا، پھر صاحب مال کو پیش کیا جائے گا اور اللہ تعالیٰ اس سے پوچھے گا: کیا میں نے تجھے ہر چیز کی وسعت نہ دے رکھی تھی، یہاں تک کہ تجھے کسی کا محتاج نہیں رکھا؟ وہ عرض کرے گا: یقیناً میرے رب! اللہ تعالیٰ فرمائے گا: میں نے تجھے جو چیزیں دی تھیں اس میں کیا عمل کیا؟ وہ کہے گا: صلہ رحمی کرتا تھا اور صدقہ و خیرات کرتا تھا، اللہ تعالیٰ فرمائے گا: تو نے جھوٹ کہا اور فرشتے بھی اسے جھٹلائیں گے، پھر اللہ تعالیٰ فرمائے گا: بلکہ تم یہ چاہتے تھے کہ تمہیں سخی کہا جائے، سو تمہیں سخی کہا گیا، اس کے بعد شہید کو پیش کیا جائے گا، اللہ تعالیٰ اس سے پوچھے گا: تجھے کس لیے قتل کیا گیا؟ وہ عرض کرے گا: مجھے تیری راہ میں جہاد کا حکم دیا گیا چنانچہ میں نے جہاد کیا یہاں تک کہ شہید ہو گیا، اللہ تعالیٰ اس سے کہے گا: تو نے جھوٹ کہا، فرشتے بھی اسے جھٹلائیں گے، پھر اللہ تعالیٰ فرمائے گا: تیرا مقصد یہ تھا کہ تجھے بہادر کہا جائے سو تجھے کہا گیا“، پھر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے میرے زانو پر اپنا ہاتھ مار کر فرمایا: ابوہریرہ! یہی وہ پہلے تین شخص ہیں جن سے قیامت کے دن جہنم کی آگ بھڑکائی جائے گی“۔
امام ترمذی کہتے ہیں: ولید ابوعثمان کہتے ہیں: عقبہ بن مسلم نے مجھے خبر دی کہ شفیا اصبحی ہی نے معاویہ رضی الله عنہ کے پاس جا کر انہیں اس حدیث سے باخبر کیا تھا۔ ابوعثمان کہتے ہیں: علاء بن ابی حکیم نے مجھ سے بیان کیا کہ وہ معاویہ رضی الله عنہ کے جلاد تھے، پھر معاویہ کے پاس ایک آدمی پہنچا اور ابوہریرہ رضی الله عنہ کے واسطہ سے اس حدیث سے انہیں باخبر کیا تو معاویہ نے کہا: ان تینوں کے ساتھ ایسا معاملہ ہوا تو باقی لوگوں کے ساتھ کیا ہو گا، یہ کہہ کر معاویہ زار و قطار رونے لگے یہاں تک کہ ہم نے سمجھا کہ وہ زندہ نہیں بچیں گے، اور ہم لوگوں نے یہاں تک کہہ ڈالا کہ یہ شخص شر لے کر آیا ہے، پھر جب معاویہ رضی الله عنہ کو افاقہ ہوا تو انہوں نے اپنے چہرے کو صاف کیا اور فرمایا: ”یقیناً اللہ اور اس کے رسول نے سچ فرمایا ہے اور اس آیت کریمہ کی تلاوت کی «من كان يريد الحياة الدنيا وزينتها نوف إليهم أعمالهم فيها وهم فيها لا يبخسون أولئك الذين ليس لهم في الآخرة إلا النار وحبط ما صنعوا فيها وباطل ما كانوا يعملون» ”جو شخص دنیاوی زندگی اور اس کی زیب و زینت کو چاہے گا تو ہم دنیا ہی میں اس کے اعمال کا پورا پورا بدلہ دے دیں گے اور کوئی کمی نہیں کریں گے، یہ وہی لوگ ہیں جن کا آخرت میں جہنم کے علاوہ اور کوئی حصہ نہیں ہے اور دنیا کے اندر ہی ان کے سارے اعمال ضائع اور باطل ہو گئے“ (سورۃ ہود) ۔
امام ترمذی کہتے ہیں: یہ حدیث حسن غریب ہے۔
سنن الترمذي ,كتاب الزهد عن رسول الله صلى الله عليه وسلم ,
کتاب: زہد ، ورع ، تقوی اور پرہیز گاری ,باب مَا جَاءَ فِي الرِّيَاءِ وَالسُّمْعَةِ ,حدیث نمبر: 2382

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ المؤلف ( تحفة الأشراف : ۱۳۴۹۳) ، وأخرج نحوہ: صحیح مسلم/الإمارة ۴۳ (۱۹۰۵) ، سنن النسائی/الجھاد ۲۲ (۳۱۳۹) ، و مسند احمد (۲/۳۲۲) (صحیح)
قال الشيخ الألباني: صحيح، التعليق الرغيب (1 / 29 - 30) ، التعليق على بن خزيمة (2482)

الله تعالیٰ ہمیں ریاکاری سے محفوظ فرمائے آمین .قارئین ! یہاں غور کریں کبھی آپ نے کسی قرآن کے قاری کو کہتے سنا ہو کہ "میں نیت کرتا ہوں قرآن پڑھنے کی تاکہ لوگ مجھے قاری کہیں ؟ یا کسی شہید کے الفاظ آپ تک پہنچے ہوں کہ " میں نیت کرتا ہوں شہید ہونے کی تاکہ لوگ مجھے بہادر کہیں "؟
یا کسی سخی نے مال دیتے وقت کہا ہو " میں نیت کرتا ہوں پیسے دینے کی تاکہ لوگ مجھے سخی کہیں ؟
قارئین ! جب یہاں نیت دل میں چھپی ہے تو نماز میں کیسے ظاہری ہے ؟ اس بدعت پر کیوں عمل کیا جاتا ہے ؟ قارئین ! اپنے اندر سے ان بدعات کو نکال دیں . الله تعالیٰ ہمیں حق بات سن کر ، اس پر عمل کی توفیق عطاء فرمائے آمین

Share This With Friends......


How to Find Your Subject Study Group & Join.

Find Your Subject Study Group & Join.

+ Click Here To Join also Our facebook study Group.


This Content Originally Published by a member of VU Students.

+ Prohibited Content On Site + Report a violation + Report an Issue


Views: 255

See Your Saved Posts Timeline

Attachments:

Reply to This

Replies to This Discussion

heheheee wahabbiii.comlgeey raho

In short, zuban say niat lazim nahi. niat dil mein hoti hai.

Jazzak Allah.

m sorry to say, hum...aj k mostly logon ka ik almia ban chuka hai, jo bat hmaray muafiq na ho hamein achi na lagay, ya jis bat ka hmaray pas ilmi jawab na ho ...foran Tanz ka teer uthaya, SECT set kia or samnay walay ko day mara...
Thats it...! 
Coz, its very simple n easy way to divert people thoughts to the main Topic and spread hatred against other groups/sects.
 
Aj k doar mein jahan deen hazaron tukron mein bat chuka hai wahan hr firqa completely THEEK bhi nahi or completely GHALAT bhi nahi... Hr firqa deen ki ksi bat ko apnaye huay hai or ksi ko jhutlaye huay.. hmara kam " tmam firqon mein say hr us Darust or Sach bat ko CHUN'NA hai, Jis per Nabi(S.A.W) or Sahabah Karam(R.A) ka amal tha." or us rastay pr chalnay wala automatically us Janati  group mein shamil ho jata hai jo Rasool Allah(S.A.W) or Sahaba karam(R.A) ki rah thi chahay woh akela hi kyun na ho.or aesay rasatay pr chalnay walay ki Pehchan sirf 'Musalman' hi hai. na k woh naam jo hum nay haq k name pr khud ko dosaron say mumtaz krnay k liay day rkhay hein or dosaron ko bhi zabardasti ksi na ksi firqay k sath engage krna farz e aein samjhay huay hein..
 
aesa discuss krnay or ik dosray ki sharing hi say possible ho sakta hai...na k sect k tanay day kr bat ko wahi rok denay say....even someone don't belong to that...
 
So,Please Stop this Target Sects Criticism and Concern the Basic Purpose.If you feel something wrong then make Correction with appropriate knowledge, it will lead many others too on righteous way. Otherwise, "Ignore" Policy is the Best Option instead to Taunt and Criticize Someone just on Sect base. It just leads to 'Fisaad' nothing else...
dear,is ayat mein Ibraheem A.S ko Allah ki wahdaniat or Rohbaniat ka mushahida krwaya ja raha tha. Buton, sitaray chand , suraj jab hr taqarwar shaey ko Rab man kr inka zawal dekha to be khteyar Pukar uthay, 
 
 (79) إِنِّي وَجَّهْتُ وَجْهِيَ لِلَّذِي فَطَرَ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضَ حَنِيفًا ۖ وَمَا أَنَا مِنَ الْمُشْرِكِينَ
 بے شک میں نے متوجہ کیا، منہ اپنے کو واسطے اسی ذات کی طرف  جس نے آسمانوں اور زمین کو پیدا کیا ہے اور میں مشرکوں میں سے نہیں ہوں.
 
is mein Qoum k kufer o shirk say Bezari ka wazhia izhaar or tamam cheezon ki bandagi say hat k Uski( jo in tamam taqatwar cheezon ka Khaliq hai.) Janib Mutwajo honay ka faisla kun ilaan hai. na k nimaz ki niat ki ja rhi hai...

First of all tu min esi post py comments karna pasand nei krta lakin aj kuch baton ki wja sy comment karny py majboor ho gya hoon.

+420(BSSE 5th ) bhai ap ko eik packet noodles ka gift krta hon

Lagta hy +420(BSSE 5th ) ki schi baat ki waja sy kuch logon k dill py churiyan chal gai hin, Malka eman agr ap aik wahabi fiqa sy mutasir hain tu byshak ap yhi maslik ektyar Kar lain mujhy kui etraaz ni ho ga keyun k ekhtalaf k bawajood min to sab ko hi musalman smjta hun lakin ap dusry masliq k logon ko mutasir krny ki koshish na hi krin to acha hy. Yahan ahm baat yah hy k wahabi hazarat esi batin q karty hain jo darasal dusary firqy per aik tanqeed hoti hy. Yhan py ap ko wo tanz to nazr ni aya jo ye shaks muqladeen, muqladeed ka lafz bol k karta hy. Agr ya Muslim Sohaib gair muqlad firqy sy taluq rakta hy tu es ka kya haq hy k ya dusary firqy k amal py tanqeed kary , inko inki fiqa Mubarak ho.  Malka Eman Es post py fasaad to asal min apky commit ki wja se hua hy wrna tu ya post ignore krny k hi kabil hy.

Ye sach hy k Muslim Sohaib sahab aik wahabi maslik sy taliq rakty hain and mra etraz wahabi firqy py sirf etna hy k ya loog apny maslik ki soch ko dusary maslik py thosny ki koshish q karty hain? ya fisad ni tu our kya hy, kya ya loog serf apny maslik ko  hi sacha musalman smjty hain or choty choty fiqahi ekhtalafaat ko barha charha k bayan kerte hain.

Muslim Sohaib ki her post min ya tu Shia, Barailvi or yhan tak k deobandi muslim tak ki tazleel hoti hy , ye bat to malka eman ko nazr nei ati, han +420(BSSE 5th ) ka tanz zaror nazr agya.  Es shaks ki posts yhan ban honi chiye q k eski post  say dusary masalik ki dil azaari hoti hy.

Jhan tak  es discussion ki mis-interpretation ko drust karny ki bat hy , tu ya loog jab taqleed ko manty hi nei hin tu dosri fiqa k btye hue amal en k nazar me ghalt hi ho ga bcz neyat ko zuban sy ada karny ka amal Jamhoor ulema ki nazar me musteheb hy jab k is musteheb amal ko ye log biddat kehte hain. Inko samjhany ka fayida is liy nahi k ya loog jab taqleed ko nei manty tu es faisly ko q many gy. Ye mamla deoband or brailvi masliq min mutafiqqa hy or ulema is ki proper justification daty hain jo wahabi Salafi or Alhe e Hadees masaliq se takrati hy.

Tmam sunni bhion sy request hy k her wo shaks jo muslim hony ka dawa kary lakin esi posting karta hoo jo umat k ekhtalaf ko hawa deti ho wo deen ki khedmat nei kr rha balky wo deen k libady min aik fisadi hy.

ąѕѕad alι thnx for packet laley

very nice asad ali bht achy sy explain kia

Asad sir apny asha ni kia :X 

RSS

Forum Categorizes

Job's & Careers (Latest Jobs)

Admissions (Latest Admissons)

Scholarship (Latest Scholarships)

Internship (Latest Internships)

VU Study

Other Universities/Colleges/Schools Help

    ::::::::::: More Categorizes :::::::::::

Member of The Month

© 2017   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service