Latest Activity In Study Groups

Join Your Study Groups

VU Past Papers, MCQs and More

We non-commercial site working hard since 2009 to facilitate learning Read More. We can't keep up without your support. Donate.


✌️ ✌️ ✌️ شب کو شب نہیں کہتے دن کو رات کہتے ہیں

شب کو شب نہیں کہتے دن کو رات کہتے ہیں

اب ہم فقط اپنی مرضی کی بات کہتے ہیں

چھوڑو پیار کی باتیں عشق کے قصے ای

سی باتوں کو ہم خرافات کہتے ہیں

وہ جو ہم نے کھایا تھا وہ تو دھوکا تھا

پر آپ کو ملا اتے شہ مات کہتے ہیں

ہم نہیں رکھتے کسی سے بھی وفا کی امید

ہم جہاں رہتے ہیں ایسے اوقات کہتے ہیں

وہ جو وفاؤں کے بدلے جفا دیتا ہے

سادہ لفظوں میں اسے بد ذات کہتے ہیں

Woman letting sand fall through her fingers.

Views: 333

Reply to This

Replies to This Discussion

Thank You ............. Siddiq Khan Kakar ^__^)!

wah

Thank You Mahoo ............... ^_^)!!

ay hayeee

fmmmmmm :X

;p <3

Hahahahhahahahahahaha 

@Seni tumky Fm ky bina mera week sahi nhi jata xD

❤️

❤️

❤️

❤️

❤️

❤️

❤️

❤️

❤️

RSS

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service