We have been working very hard since 2009 to facilitate in learning Read More. We can't keep up without your support. Donate.

ایسا بھی میرے دوست فارغ نہیں ہوں - میں بیٹھا ہوں انتظار میں، کب یاد آوں گا

کوئی خوشی غمی ہو میں تب یاد آوں گا
ہر حال ڈھونڈ لوں گا سبب، یاد آوں گا

سب موسموں کو بن مرے چاہے گزار لو
برسات جب بھی آئے گی تب یاد آوں گا

کھوئے گا جب جہان حسینوں کی بھیڑ میں
میں چاند، کسی ایسی ہی شب یاد آوں گا

آنکھوں میں دے کچل یا خیالوں میں دفن کر
بن کر میں ایک خواب طرب، یاد آوں گا

تو یاد کر نہ کر مجھے ، یہ تو گوارا ہے
سوچے گا کسی اور کو تب یاد آوں گا

ایسا بھی میرے دوست فارغ نہیں ہوں میں
بیٹھا ہوں انتظار میں، کب یاد آوں گا

ہو کر یوں خوش گمان گزاری ہے زندگی
جب یاد آؤں گا تو غضب، یاد آؤں گا

کب تک گزارو گے یہاں اوروں کی زندگی
جب ہو گی تم کو اپنی طلب، یاد آوں گا

خوش فہمی کا یہ سلسلہ ابرک دراز ہے
اٹھ جاوں گا جہاں سے میں، تب یاد آوں گا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک

Views: 126

Reply to This

Replies to This Discussion

barhi achi shyri hy es ki 

niceiest

May u live long tariq bhai

 +++LEARNER+++  Thanks for ur wish .. same to u :-) 

RSS

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service