We have been working very hard since 2009 to facilitate in learning Read More. We can't keep up without your support. Donate.

www.bit.ly/vucodes

+ Link For Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution

www.bit.ly/papersvu

+ Link For Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More

ایک سوچ عقل سے پھسل گئی

مجھے یاد تھی کہ بدل گئی

میری سوچ تھی کہ وہ خواب تھا

میری زندگی کا حساب تھا

میری جستجو کہ برعکس تھی

میری مشکلوں کا وہ عکس تھی

مجھے یاد ہو تو وہ سوچ تھی

جو نہ یاد ہو تو گمان تھا

مجھے بیٹھے بیٹھے گمان ہوا

گمان نہیں... خدا تھا وہ

میری سوچ نہیں تھی خدا تھا

وہ خدا کہ جس نے زبان دی

مجھے دل دیا مجھے جان دی

وہ زبان جسے نہ چلا سکیں

وہ ہی دل جسے نہ مٹا سکیں

وہ ہی جان جسے نہ لگا سکیں

کبھی مل تو تجھ کو بتائیں ہم

تجھے اس طرح سے ستائیں ہم

تیرا عشق تجھ سے چھین کے

تجھے مے پلا کے رلائیں ہم

تجھے درد دوں تو نہ سہ سکے

تجھے دوں زبان تو نہ کہہ سکے

تجھے دوں مکان تو نہ رہ سکے

تجھے مشکلوں میں گھرا کے میں


کوئی ایسا رستہ نکال دوں
ترے درد کی میں دوا کروں


کسی غرض کے میں سوا کروں
تجھے ہر نظر پہ عبور دوں


تجھے زندگی کا شعور دوں
کبھی مل بھی جائیں گے غم نہ کر


کبھی گر بھی جائیں گے غم نہ کر
ترے ایک ہونے میں شک نہیں


میری نیتوں کو تو صاف کر
تیری شان میں بھی کمی نہیں
میرے اس کلام کو معاف کر


+ http://bit.ly/vucodes (Link for Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution)

+ http://bit.ly/papersvu (Link for Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More)

+ Click Here to Search (Looking For something at vustudents.ning.com?)

+ Click Here To Join (Our facebook study Group)


Views: 35

Reply to This

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service

.