We have been working very hard since 2009 to facilitate in learning Read More. We can't keep up without your support. Donate.

وہ بے وفا ہی سہی اس کو بے وفا نہ کہو 

ادب کی حد میں رہو حسن کو برا نہ کہو 

شراب عشق کی عظمت سے جو کرے انکار 

وہ پارسا بھی اگر ہو تو پارسا نہ کہو 

پڑا ہے کام اسی خود پرست کافر سے 

جسے یہ ضد ہے کسی اور کو خدا نہ کہو 

مرا خلوص محبت ہے قدر کے قابل 

زباں پہ ذکر وفا ہے اسے گلا نہ کہو 

یہ کیا کہا کہ دعا ہے اثر سے بیگانہ 

تڑپ نہ دل کی ہو جس میں اسے دعا نہ کہو 

یہ اور کچھ نہیں فطرت کی بد مذاقی ہے 

بغیر بادہ گھٹا کو کبھی گھٹا نہ کہو 

تڑپ تڑپ کے گزارو شب فراق اپنی 

یہ ناز حسن ہے شاعرؔ اسے جفا نہ کہو 

Views: 67

Reply to This

Replies to This Discussion

wah nice

Niceee ^_^

RSS

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service