Latest Activity In Study Groups

Join Your Study Groups

VU Past Papers, MCQs and More

تمہارا ہجر منا لوں اگر اجازت ہو

میں دل کسی سے لگا لوں اگر اجازت ہو

تمہارے بعد بھلا کیا ہے وعدہ و پیماں
بس اپنا وقت گنوا لوں اگر اجازت ہو

تمہارے ہجر کی شب ہاے کار میں جاناں
کوئی چراغ جلا لوں اگر اجازت ہو

جنوں وہی ہے، وہی میں، مگر شہر ہے نیا
یہاں بھی شور مچا لوں اگر اجازت ہو

کسے ہے خواھش مرہم گری مگر پھر بھی
میں اپنے زخم دکھا لوں اگر اجازت ہو

تمہاری یاد میں جینے کی آرزو ہے ابھی
...کچھ اپنا حال سںبھالوں اگر اجازت ہو

Views: 90

Reply to This

Replies to This Discussion

 ijazat hai :-X:-X:-X

Hahaha

Shukriaa .. ^_^)!

بلا نئی کوئی پالوں اگر اجازت ہو 

جنوں کو شوق بنا لوں اگر اجازت ہو 

نگار خانۂ ہستی کے آئنوں میں ذرا 

میں اپنا عکس سجا لوں اگر اجازت ہو 

شراب حسن میں مستی ہے بے نیازی کی 

خودی کے شیشے میں ڈھالوں اگر اجازت ہو 

ہماری تم سے ملاقات ہو بھی سکتی ہے 

میں کوئی راہ نکالوں اگر اجازت ہو 

بہت دنوں سے ہیں عریاں بدن خیال مرے 

ردائے حرف اڑھا لوں اگر اجازت ہو 

وہ تشنگی جسے تم سلسبیل کہتے ہو 

لبوں پہ میں بھی اٹھا لوں اگر اجازت ہو 

نظر ظہور کے جن تجربوں سے گزری ہے 

کبھی کسی کو بتا لوں اگر اجازت ہو 

کسی سے دل ہی نہیں مل سکا شہابؔ تو اب 

نظر تمہی سے ملا لوں اگر اجازت ہو 

very nice..

Ehm Ehm..!

Izajat Hy .. ^_^)!

;p

chori kr rha :P

Haha 

good good .. ^_^)!

RSS

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service