Latest Activity In Study Groups

Join Your Study Groups

VU Past Papers, MCQs and More

آشنا غم سے ملا راحت سے بیگانہ ملا
دِل بھی ہم کو خوبیٔ قسمت سے دیوانہ ملا

بلبل و گل شمع و پروانہ کو ہم پر رشک ہے
درد جو ہم کو ملا سب سے جُدا گانہ ملا

ہم نے ساقی کو بھی دیکھا پیرِ مے خانہ کو بھی
کوئی بھی اِن میں نہ رازِ آگاہِ مے خانہ ملا

سب نے دامن چاک رکھا ہے بقدرِ احتیاج
ہم کو دیوانوں میں بھی کوئی نہ دیوانہ ملا

ہم تو خیر آشفتہ ساماں ہیں ہمارا کیا سوال
وہ تو سنوریں جن کو آئینہ ملا شانہ ملا

کیا قیامت ہے کہ اے عاجزؔ ہمیں اِس دور میں
طبع شاہانہ ملی منصب فقیرانہ ملا

Views: 10

Reply to This

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service