Latest Activity In Study Groups

Join Your Study Groups

VU Past Papers, MCQs and More

کوئی مشکل نہیں پہچان ہماری فارغؔ اپنی خوشبو کا سفر ہم نے جدا رکھا ہے

تیری خاطر یہ فسوں ہم نے جگا رکھا ہے

ورنہ آرائش افکار میں کیا رکھا ہے

ہے ترا عکس ہی آئینۂ دل کی زینت

ایک تصویر سے البم کو سجا رکھا ہے

برگ صد چاک کا پردہ ہے شگفتہ گل سے

قہقہوں سے کئی زخموں کو چھپا رکھا ہے

اب نہ بھٹکیں گے مسافر نئی نسلوں کے کبھی

ہم نے راہوں میں لہو اپنا جلا رکھا ہے

ہم سے انساں کی خجالت نہیں دیکھی جاتی

کم سوادوں کا بھرم ہم نے روا رکھا ہے

کس قیامت کا ہے دیدار ترا وعدہ شکن

دل بے تاب نے اک حشر اٹھا رکھا ہے

کوئی مشکل نہیں پہچان ہماری فارغؔ

اپنی خوشبو کا سفر ہم نے جدا رکھا ہے

Views: 3

Reply to This

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service