Latest Activity In Study Groups

Join Your Study Groups

VU Past Papers, MCQs and More

We non-commercial site working hard since 2009 to facilitate learning Read More. We can't keep up without your support. Donate.

تجھے چھو کر بہار آئی تھی 

کنج غم میں برسا تھا 

ترے آنے سے ساون 

چاندنی چھٹکی تھی 

پھولی تھی شفق 

بولی تھی کوئل دیکھ کر تجھ کو 

عمل یہ سانس لینے کا بہت آساں ہوا تھا 

کھیل سا لگنے لگا تھا 

آزمائش سے گزرنا 

کارزار زیست میں، دن رات کرتا 

اب۔۔۔ مگر 

پھر ابتدا سے 

کاوش پیہم میں 

گھومے جا رہے ہیں 

وقت کے پہیے 

نئے تکلیف دہ آغاز سے ہم کو گزرنا پڑ رہا ہے پھر۔

Views: 36

Reply to This

Replies to This Discussion

ahaaan .. :X

RSS

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service