Latest Activity In Study Groups

Join Your Study Groups

VU Past Papers, MCQs and More

We non-commercial site working hard since 2009 to facilitate learning Read More. We can't keep up without your support. Donate.

رنج اس کا نہیں کہ ہم ٹوٹے

یہ تو اچھا ہوا بھرم ٹوٹے

ایک ہلکی سی ٹھیس لگتے ہی

جیسے کوئی گلاس ہم ٹوٹے

آئی تھی جس حساب سے آندھی

اس کو سوچو تو پیڑ کم ٹوٹے

لوگ چوٹیں تو پی گئے لیکن

درد کرتے ہوئے رقم ٹوٹے

آئینے آئینے رہے گرچہ

صاف گوئی میں دم بہ دم ٹوٹے

شاعری عشق بھوک خودداری

عمر بھر ہم تو ہر قدم ٹوٹے

باندھ ٹوٹا ندی کا کچھ ایسے

جس طرح سے کوئی قسم ٹوٹے

ایک افواہ تھی سبھی رشتے

ٹوٹنا طے تھا اور ہم ٹوٹے

زندگی کنگھیوں میں ڈھال ہمیں

تیری زلفوں کے پیچ و خم ٹوٹے

تجھ پہ مرتے ہیں زندگی اب بھی

جھوٹ لکھیں تو یہ قلم ٹوٹے

Views: 65

Reply to This

Replies to This Discussion

Ahan zebi bhaiiiii

Uhun . Umaru :-!

ahan

"jin pe hota h dil ko bht bhrosa tabish

waqk parny pe wahi log daga dety hn"

تم سمندر کی رفاقت پہ بھروسہ نہ کرو
تشنگی لب پہ سجائے ہوے مر جاؤ گے

khoob rkha h rfaqat ka bhram is ne b

kat chuky hath to fr hath milany aye

Oh so too masla hogia Expectations tot gai

رنج اس کا نہیں کہ ہم ٹوٹے

یہ تو اچھا ہوا بھرم ٹوٹے

Quotes On Expectations Of Others. QuotesGram

RSS

Looking For Something? Search Below

VIP Member Badge & Others

How to Get This Badge at Your Profile DP

------------------------------------

Management: Admins ::: Moderators

Other Awards Badges List Moderators Group

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service