Latest Activity In Study Groups

Join Your Study Groups

VU Past Papers, MCQs and More

We non-commercial site working hard since 2009 to facilitate learning Read More. We can't keep up without your support. Donate.

لوگ کہتے ہیں ناول وقت کا ضیاع ہیں۔۔۔ ان سے کچھ نہیں سیکھ سکتے۔۔
میں بتاوُں کہ میں نے کیا سیکھا؟
میں نے 'جنت کے پتے' سے سیکھا کہ اچھی لڑکیاں سب کچھ نہیں کر لیتیں،وہ اللہ کا حکم مانتی ہیں اور اس سے اچھے گمان رکھتی ہیں۔(نمرہ احمد)
میں نے 'نمل' سے سیکھا کہ ہمارے لیئے سب سے اہم ہماری فیملی ہوتی ہے،ان کو اپنے ہونے کا احساس دلانا چاہیئے۔(نمرہ احمد)
میں نے 'مصحف' سے سیکھا کہ اللہ ہمارا سب سے قریبی دوست ہے۔وہ ہمیں کبھی اکیلا نہیں چھوڑتا۔(نمرہ احمد)
میں نے 'متاعِ جاں ہے تُو' سے سیکھا کہ کسی کے جانے سے کوئی مر نہیں جاتا، بس جینے کے انداز بدل جاتے ہیں۔(فرحت اشتیاق)
میں نے 'اندھیری رات کے مسافر' سے سیکھا کہ ہم حکمرانوں کی آس پر نہیں بیٹھ سکتے، ہمیں اپنی مدد خود آپ کرنی ہے۔(نسیم حجازی)
میں نے 'غم ہے یا خوشی ہے تُو" سے سیکھا کہ دل ٹوٹنے سے سے جو انرجی پیدا ہوتی ہے اسے ضائع نہیں کرتے بلکہ خود کو مضبوط بنانے کے لیئے اس کا استعمال کرتے ہیں۔(تنزیلہ ریاض)
میں نے 'یار یاروں سے ہوں نا جدا' سے سیکھا کہ دوست زندگی کا ایک اہم پہلو ہیں۔ ان کے لیئے جو قربانی دینی پڑے دے دو۔(ماہرہ زینب خان)
میں نے 'نیلم کا مرکت' سے سیکھا کہ اپنے وطن کے لیئے جان کی پرواہ کیئے بغیر لڑنا چاہیئے۔(دیبا تبسم)
میں نے 'پیرِ کامل' سے سیکھا کہ اللہ جسے چاہے راہِ راست پر لے آئے اور یہ کہ خدا دعائیں قبول کرتا ہے جلد یا بدیر۔(عمیرہ احمد)
میں نے 'آبِ حیات' سے سیکھا کہ حرام کا مال کبھی بھی آپ کو نفع نہیں دے سکتا۔(عمیرہ احمد)
میں نے 'قربونتِ بیرم' سے سیکھا کہ معجزے بھی ہوتے ہیں اور ان پر یقین رکھنا چاہیئے۔(سمرین شاہ)
میں نے 'یارم' سے سیکھا کہ کوئی بھی چیز منحوس نہیں ہوتی، یہ بس ہمارے اپنے ذہنوں کی خرافات ہیں۔(سمیرہ حمید)
میں نے 'قراقرم کا تاج محل' سے سیکھا کہ ہم کسی بھی چیز سے اپنی محبت ختم نہیں کرسکتے، چاہے وہ پہاڑ ہی کیوں نہ ہوں۔(نمرہ احمد)
میں نے 'اک لفظ محبت' سے سیکھا کہ جو دوسروں کے لیئے آسانیاں پیدا کرتا ہے خدا اس کے لیئے آسانیاں پیدا کرتا ہے۔(نیلم ریاست)
میں نے 'من درِ عشق باشما ہاستم' سے سیکھا کہ ظلم پر خاموش رہنے والا بھی ظالم ہوتا ہے۔(سمرین شاہ)
میں نے 'آن' سے سیکھا کہ توبہ کا در ہمیشہ کھلا ہے، اور خدا کہ ہر کام میں مصلحت ہوتی ہے۔(میرب حیات)
میں نے 'سانس ساکن تھی' سے سیکھا کہ عروج کو ہمیشہ زوال آتا ہے، مگر زوال کبھی بھی ہمیشہ کے لیئے نہیں رہتا۔(نمرہ احمد)
میں نے 'میرا رکھوالا' سے سیکھا کہ جیت ہمیشہ سچ کی ہوتی ہے۔(سمرین شاہ)
میں نے ناولوں سے زندگی جینے کا ڈھنگ سیکھا۔ میں نے ناولوں میں دوسروں کی زندگیوں میں کود کر ایک نئی دنیا کو جیا۔ میں مختلف ہوں، کیوں کہ مجھے مختلف چیزیں پسند ہیں۔ ہم ناول پڑھنے والی کبھی بھی نارمل نہیں ہوتیں۔ اور ہمیں نارمل ہونا بھی نہیں چاہیئے۔🦋🦋🦋🦋

Views: 80

Reply to This

Replies to This Discussion

It is true every novel has some kind of positive message in it. I was a big fan of the novels and I have read 60% of novels from the above list but, I stopped reading them why? because they leave bad impacts on the mind.

What are the bad impacts? Fear, obsession, guilt, fake imaginations, and sometimes depression.

Please do more research on it. I had few very good research papers but now unable to find them. 

It felt little odd, think again.  ہم ناول پڑھنے والی کبھی بھی نارمل نہیں ہوتیں۔ اور ہمیں نارمل ہونا بھی نہیں چاہیئے

 

hmm ri8 little bit :)

Little Bit... Which part is right :P?

k novls parhny waly normal nai hoty

I agree to some extent with  + AiM 

No doubt k achay novels behtari lane k waseela ban sakte hain. Mene (specifically in my zamana e jahiliat :P) kafi parhay hain khas tor pe Umera Ahmed k. 

Me sirf readers ko aik bat pe guide kerna chahu ga k ap novels ko top preference mat dain. Mene novels parhna is liye choray inko parhne se meri zindagi ka bohatttt zyadaaa time aik simple si batain samajne me lag gaya. Sometimes writers background explain kerne k liye zarorat se zyda details detay hain. Maslan kisi ki khobsurati ya adaat ka bayan, mosam ka bayan.

Since "bravity is the soul of wit" to jab mujhe ye bat samaj aai to aisi books ko prefer kia jo Roohani ya intellectual kisam k logo ki thi, maslan pehli preference me moderately religious books, 2nd prefernce me Ashfaq Ahmed and Bano Qudsia type k writers ki books  jo bohat rich hain. Bano Qudsia took about 15 years to write "Raja Gidh" novel, so unko sirf likhne ka chaska nahi tha, she meant to deliver something quality to the readers. So aam novels are about quantity and i believe ilm or maarefat k mamla me quality is most important. 

Agar Nabi-Alle Nabi (SAWW), Aulia or Anbia (AS) k farameen or waqiat pe mabni books parhi jayen to without un-necessary details apko bohat maarefat ki batain pata chalain gI. Novel k 1000 words me apko jo mile ga wo kisi bargazeeda hasti k 100 lafzon me mil jaye ga. 

So its just a suggestion, me novels parhne k khilaf nahi hu, han ye fantasy reading agar chaska ban jaye to phr banda x-rated english or indian writers ko parhna shuru ho jata hai or phr ye sab parhna la'hasil hai. 

ok sahi

RSS

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service