Latest Activity In Study Groups

Join Your Study Groups

VU Past Papers, MCQs and More

We non-commercial site working hard since 2009 to facilitate learning Read More. We can't keep up without your support. Donate.

‏حیرت ہے سرِ دار جو مصلوب رہا ہے
‏اس شخص کا ہر داؤ بہت خوب رہا ہے

‏آج اس کی خموشی پہ نہ تم انگلی اٹھاؤ
‏سنتے ہیں کہ وہ صاحبِ اسلوب رہا ہے

‏اب وقت نے سب نقش بگاڑے ہیں وگرنہ
‏یہ شہر مرے حُسن سے مرعوب رہا ہے

‏ہے اور کوئی کارِ اذیت تو بتاؤ
‏کیا ہے کہ مرا عشق سے جی اوب رہا ہے

‏اترا ہے ترے ہجر کا سیلاب رگوں میں
‏دل آج جزیروں کی طرح ڈوب رہا ہے

Views: 20

Reply to This

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service