We have been working very hard since 2009 to facilitate in your learning Read More. We can't keep up without your support. Donate Now.

www.bit.ly/vucodes

+ Link For Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution

www.bit.ly/papersvu

+ Link For Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More

Dear Students! Share your Assignments / GDBs / Quizzes files as you receive in your LMS, So it can be discussed/solved timely. Add Discussion

How to Add New Discussion in Study Group ? Step By Step Guide Click Here.


صبح کے پانچ بجے پتہ چلا کہ بڑے بڑے آگ کے گولوں کی بارش نے امریکہ میں تباہی مچا دی۔ پانی کی ہمالیہ سے بھی زیادہ بلند سمندری لہر پاکستان کی طرف بڑھ رہی ہے اور جلد ہی ہم سب ختم ہو جائیں گے۔ پوری دنیا میں بس چند انسان زندہ بچیں گے۔ ایک عجب سی بھگ دڑ مچ گئی ہے۔ ہاہاہا :-) یہ وہ خیالات ہیں جو کچھ لوگوں کو آج کل مایا مذہب سے منسوب ایک پشین گوئی کے نتیجہ میں آ رہے ہیں۔ کل ایک دوست کو پریشان دیکھ کر اندازہ ہوا کہ کئی بیچارے لوگ واقعی تحفظات کا شکار ہیں تو سوچا چلو اس پشین گوئی کے سچ، جھوٹ اور مسلمانوں پر اس کے اثرات کے بارے میں کچھ لکھ ہی دیتا ہوں۔ جن کو نہیں پتہ ان کو بتاتا چلوں کہ کافی عرصے سے کہا جا رہا ہے کہ مایا مذہب میں پشین گوئی موجود ہے کہ 21 دسمبر 2012ء کو مایا کیلنڈر ختم ہونے کے ساتھ ہی دنیا میں بڑے پیمانے پر تباہی ہو گی اور صرف چند لوگ ہی زندہ بچیں گے۔ اس کے علاوہ کئی لوگ کہتے پھر رہے ہیں کہ 21 دسمبر کو مایا مذہب کے کیلنڈر کا ایک بہت بڑا چکر مکمل ہو رہا ہے اور جب بھی یہ چکر مکمل ہوتا ہے تو دنیا ایک دفعہ ختم ہو کر دوبارہ شروع ہوتی ہے۔

مایا (Maya) ایک میسو امریکن (Mesoamerican) سولائزیشن (مذہب) ہے۔ اس کا اپنا ایک مایا کیلنڈر (Calendar) ہے۔ جس طرح ہجری اور عیسوی کیلنڈر میں وقت کی اکائیاں دن، مہینہ اور سال وغیرہ ہوتے ہیں بالکل ایسے ہی مایا کیلنڈر میں بھی مختلف اکائیاں ہیں۔ مایا کیلنڈر میں دن کو ”کن“(Kin) کہا جاتا ہے۔ 20 کن کا ایک وینل، 18 وینل کا ایک ٹن، 20 ٹن کا ایک کاٹن، 20 کاٹن کا ایک ”باکٹن“ (Baktun) ہوتا ہے۔ یوں ایک باکٹن میں 144000 دن یعنی تقریباً 394 سال ہوتے ہیں۔ مایا کیلنڈر کی باکٹن سے بھی بڑی اکائیاں موجود ہیں۔ سب سے بڑی اکائی الاؤٹن (Alautun) ہے، جس میں 6 کروڑ، 30 لاکھ، 81 ہزار، 4 سو 29 (63081429) سال ہوتے ہیں۔

مایا کیلنڈر کے حساب سے یہ تیرھواں باکٹن چل رہا ہے، جو کل یعنی 21 دسمبر 2012ء کو ختم ہو جائے گا اور یہیں سے چودھواں باکٹن شروع ہو گا۔ مایا کیلنڈر میں ایسا ہر 394 سال بعد ہوتا ہے مگر پچھلی دفعہ یا جہاں تک بھی جدید انسانی تاریخ موجود ہے اس میں دنیا تباہ ہو کر دوبارہ شروع ہونے کا ذکر کہیں نہیں ملتا، تو پھر اس دفعہ ایسا شوشہ پتہ نہیں کیوں چھوڑا گیا ہے۔ کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ 21 دسمبر کو مایا کیلنڈر ختم ہو رہا ہے۔ یہ خیال غلط ہے کیونکہ کوئی بھی کیلنڈر تب ختم ہو گا جب وقت ختم ہو گا۔ ایک اکائی مکمل ہونے سے کیلنڈر ختم نہیں ہوا کرتے بلکہ ایک ”صدی“ کے گزرنے پر دوسری ”صدی“ شروع ہو جاتی ہے۔ اب بندہ یہ کہے کہ جی ”صدی“ سے آگے اکائی نہیں لہٰذا کیلنڈر ختم ہو رہا ہے تو ایسا کہنے والے کو یقیناً گنتی نہیں آتی۔ :-) ویسے بالفرض اگر ہم وقت کی بڑی سے بڑی اکائی کے مکمل ہونے سے کیلنڈر ختم ہونے والی بات مان بھی لیں تو پھر بھی مایا کیلنڈر کے حساب سے وقت ابھی بڑی سے بڑی اکائی الاؤٹن تک نہیں پہنچا۔ ابھی تو تیرھواں باکٹن ختم ہو رہا ہے، جبکہ 20 باکٹن کے بعد پیکٹن، 20 پیکٹن کے بعد کلابٹن، 20 کلابٹن کے بعد کینچلٹن اور 20 کینچلٹن کے بعد ایک الاؤٹن پورا ہو گا۔ مایا کیلنڈر کے حساب سے 21دسمبر2012ء کو تیرہ باکٹن پورے ہو رہے ہیں یعنی مایا کیلنڈر کے تقریباً 5125 سال مکمل ہو جائیں گے۔ اس سے زیادہ اس دن یا مستقبل قریب میں معمول سے ہٹ کر دنیا کی تباہی کے متعلق کچھ بھی بڑا نہیں ہونے والا۔ ویسے بھی ابھی ایک الاؤٹن ہونے میں چھ کروڑ سالوں سے بھی زیادہ وقت ہے۔ :-) اس لئے ایسی فضول اور جھوٹ پر مبنی پشین گوئی پر کان نہ دھریں اور سکون سے زندگی گزاریں۔ ویسے کئی لوگ پریشان ہیں جبکہ مایا مذہب والے تو جشن کی تیاریاں کر رہے ہوں گے کیونکہ جیسے دیگر لوگ نئے سال یا صدی پر جشن مناتے ہیں بالکل ایسے ہی مایا مذہب والے جشن منائیں گے۔ آخر ان کے مذہبی کیلنڈر کے مطابق ایک نیا باکٹن شروع ہونے والا ہے۔

وکی پیڈیا کے مطابق 21 دسمبر 2012ء کو قیامت یا دنیا میں بڑے پیمانے پر تباہی ہونے والی بات پر، پروفیشنل مایانسٹ سکالر کہتے ہیں کہ ایسی کوئی پشین گوئی مایا مذہب میں موجود نہیں اور کیلنڈر ختم ہونے والی بات بھی مایا کی تاریخ و تہذیب کو غلط پیش کر رہی ہے۔ میرا ذاتی خیال ہے کہ مایا کیلنڈر کا تقریباً 394 سالوں پر مشتمل ایک بڑا چکر 21دسمبر کو ختم ہو رہا ہے اور ایسے موقعے روز روز تھوڑی آتے ہیں لہٰذا کسی نے شوشا چھوڑا ہو گا۔ ہالی وڈ نے تو بس اس آئیڈیا پر فلم بنائی اور لوگ اسے سچ سمجھ رہے ہیں۔ بس یہی نہیں بلکہ کئی لوگ تو اس تباہی سے بچنے کے لئے تیاریاں بھی کیے بیٹھے ہیں اور تو اور کئی لوگوں نے اس تباہی کے نام پر اپنے کاروبار بھی چمکائے۔

سارے ثبوتوں اور حقائق کے نتیجے میں اکثریت کو یقین ہے کہ ایسا کچھ نہیں ہونے والا مگر پھر بھی محض اتفاقاً اگر کوئی زلزلہ، طوفان یا کوئی بھی آفت آ پڑی تو؟ فرض کریں ایک عام بندے بلکہ ایک عام مسلمان کو ساری باتوں کا علم نہیں، اس نے صرف اتنا سن رکھا ہے کہ مایا مذہب کے مطابق 21دسمبر کو دنیا تباہ ہو جائے گی۔ اب 21 دسمبر کو اتفاقاً زلزلہ آ گیا، وہی بندہ عمارت کے نیچے دب گیا، آخری سانسوں پر وہ کیا سوچے گا؟ کہتے ہیں کہ آخری سانسوں پر تو شیطان بھی بھرپور وار کرتا ہے۔ کیا وہ بندہ یہ نہیں کہے گا کہ واقعی مایا مذہب سچا ہے؟ مرتا بندہ جس مذہب کو سچا کہے گا کیا وہ اس پر ایمان نہیں لے آئے گا؟ اگر ایسا ہی ہے تو پھر کیا اسلام کی سچائی یا مسلمان کو فرق پڑتا ہے یا نہیں؟

دیکھیں جی پہلی بات تو یہ ہے کہ بے شک ہم ”بائی چانس“ مسلمان ہیں مگر میرے خیال میں ہمیں بس نام کا مسلمان ہونے کی بجائے مذہب کی لیبارٹری میں قرآن کے احکامات کو لے کر اسلام کا پریکٹیکل کر کے پکا سچا مسلمان بننا چاہئے۔ تاکہ نہ تو زلزلہ اور آلو پر قدرتی طور پر بنا بُت ہمارا ایمان خطرے میں ڈالے اور نہ ہی تربوز میں قدرتی طور پر لکھا لفظ ”اللہ“ ہمارے ایمان کو تقویت دے۔ اسلام کی سچائی کے لئے قرآن اور اس کے احکامات سے بڑھ کر اور کوئی ثبوت نہیں۔ خیر مایانسٹ سکالر خود کہہ رہے ہیں کہ ایسی کوئی پشین گوئی مایا مذہب میں موجود نہیں، مگر فرض کرتے ہیں کہ ایسی کوئی پشین گوئی موجود بھی ہو اور واقعی دنیا کی تھوڑی بہت تباہی ہو تو پھر کیا اسلام کو اس سے کوئی فرق پڑتا ہے یا نہیں؟

دنیا میں کئی قسم کے علم آئے، ان میں جادو، خواب کی تعبیر اور پشین گوئی وغیرہ کے علم بھی ہیں۔ اب ہزاروں سال پہلے کسی بندے کے پاس جادو یا پشین گوئی کا علم تھا یا کسی خواب کی تعبیر کے نتیجہ میں 21دسمبر کو دنیا کی تباہی کی پشین گوئی کر دی تھی تو یہ کوئی بڑی بات نہیں۔ جب علم کے زور پر جادوگروں کی رسیاں سانپ بن سکتی ہیں اور سونے کا بچھڑا بول سکتا ہے تو پھر علم کے زور پر ایسی پشین گوئی ہو گئی تو کونسی بڑی بات ہے۔ یہ بھی تو ہو سکتا ہے کہ ایسی کوئی پشین گوئی ہزاروں سال پہلے اللہ کے کسی پیغمبر نے کی ہو۔ یہ بھی تو ہو سکتا ہے کہ مایا مذہب جس سے شروع ہوا ہو وہ اللہ کا پیغمبر ہو۔ جس طرح باقی کئی پیغمبروں کے پیروکاروں نے مذہب میں تبدیلیاں کر دی ہیں ایسے ہی مایا مذہب والوں نے بھی تبدیلیاں کر دی ہوں مگر دنیا کی تباہی والی بات تھوڑی بہت تبدیل ہوتے ہوتے آج بھی کچھ نہ کچھ اصل حالت میں ہو۔ اس لئے اگر دنیا کی تباہی جیسا کچھ ہو بھی تو اس میں اسلام کی سچائی کے مخالف کچھ نہیں۔

بہر حال یہ سب مفروضے اور فرض کی گئی باتیں ہیں اور ان کو یہاں صرف اس لئے لکھا ہے کہ دوست احباب جان سکیں کہ ایسا کچھ ہونا نہ ہونا کوئی بڑی باتیں نہیں ہوتیں۔ ایسی باتوں سے اسلام کو کوئی فرق نہیں پڑنے والا کیونکہ اسلام وہ سچائی ہے جو سر چڑھ کر بولتی ہے۔ اسلام کو نہ پہلے کوئی خطرہ تھا، نہ اب ہے اور نہ ہی کبھی ہو گا۔ البتہ ہم مسلمانوں کے کرتوتوں کی وجہ سے ہمیں اور ہمارے ایمان کو ضرور خطرہ ہو سکتا ہے۔

دوستو! ثبوت اور حقائق بتاتے ہیں کہ فی الحال دنیا کی مکمل تباہی جیسا کچھ نہیں ہونے والا اور اگر کہیں جزوی طور پر ایسا کچھ ہوتا ہے تو وہ محض اتفاق یا کائناتی معمول ہو گا۔ ظاہر ہے روز کی طرح 21دسمبر کو بھی سڑکوں پر حادثے ہونگے، سمندر کی لہریں پہلے جیسی چلیں گی، شر پسند شر پھیلاتے رہیں گے، اچھائی سر چڑھ کر بولتی رہے گی اور اس سب میں پہلے کی طرح کہیں کچھ الٹا سیدھا ہوتا ہے تو یہ دنیا کے معمول کا حصہ ہو گا نہ کہ کسی مذہب کی سچائی یا کسی مذہب کے جھوٹا ہونے کی علامت۔ پہلی بات تو یہ کہ اللہ تعالیٰ سب کو خیر خیریت سے رکھے، لیکن اگر کسی کو کوئی حادثہ پیش آتا ہے تو وہ ہرگز اپنا ایمان خطرے میں نہ ڈالے اور یہ نہ سوچے کہ یہ حادثہ فلاں مذہب کی پشین گوئی کی وجہ سے آیا ہے بلکہ یہی سوچے کہ جیسے پہلے حادثے ہوتے رہے ہیں ویسا ہی یہ حادثہ ہے مگر اب کی بار میرے ساتھ ہے۔ بعض لوگ کہتے ہیں کہ جس کے ساتھ حادثہ ہو گا کیا اسے نہیں پتہ ہو گا کہ یہ چھوٹا سا حادثہ ہے نہ کہ بڑے پیمانے کی تباہی مگر ایسے لوگ یہ نہیں سوچتے کہ حادثے بچ جانے والوں کے لئے چھوٹے یا بڑے ہوتے ہیں۔ جو کسی حادثے میں مر رہا ہوتا ہے اس کے لئے وہ حادثہ قیامت جیسا ہی ہوتا ہے۔ ایک اینٹ کے نیچے آ کر مرنے والے کے لئے وہ ایک اینٹ نہیں بلکہ لاکھوں من وزنی عمارت ہو تی ہے۔ چُلو بھر پانی میں ڈوب کر مرنے والے کے لئے وہ تھوڑا سا پانی نہیں بلکہ گہرا سمندر ہوتا ہے۔ اس لئے اللہ نہ کرے اگر کسی کے ساتھ ایسی کوئی مشکل آتی ہے تو اسے پشین گوئی والی قیامت نہ سمجھے اور ثابت قدم رہے۔

ایک دفعہ پھر دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ سب کو خیر خیریت سے اور سب کا ایمان سلامت رکھے۔۔۔آمین


+ http://bit.ly/vucodes (Link for Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution)

+ http://bit.ly/papersvu (Link for Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More)

+ Click Here to Search (Looking For something at vustudents.ning.com?)

+ Click Here To Join (Our facebook study Group)


Views: 2043

Reply to This

Replies to This Discussion

good job

agr inssan ko natural disasters ka ilm ho to Khuda ka to concept hi end ho jaye

natural disastors k bare mein Ilm sirf Allah Pak ko hi he bcz wo khud sb kuch krta he Insan k pas kuch b ilm ni he-

its an imaginary thoughts...its not our belief bcz we believe on (Allah SWT)

WELL said..............

Thnx alot

thanx 4 sharing,,,,,,,

ahan....good bro

yp you r  right

Fact

Qyamat anni zaror ha magrAllah Pak k elawa is k bary main koi ni janta k kb ahy ge. Behar hall hamin marny sy paly marnay ki tyari zoror karni chaey. Allah hum sub ka hami o nasir ho (AMEEN)

i agree with you faizan

Ameen

RSS

Latest Activity

Saarim posted a status
"Jis Raat Mehakti Hain Kisi Raat Ki Yaadain Us Raat Guzarti He Nahin Raat Hamari"
13 minutes ago
UZMA joined +M.Tariq Malik's group
1 hour ago
khaaniii updated their profile
1 hour ago
maheen updated their profile
1 hour ago
UZMA liked +M.Tariq Malik's discussion ENG501 Mid Term Papers Spring 2019 (15~28-June 2019) & All Solved Past Papers, Solved MCQs & Helping Material
1 hour ago
UZMA liked +M.Tariq Malik's discussion ENG501 Mid Term Papers Spring 2019 (15~28-June 2019) & All Solved Past Papers, Solved MCQs & Helping Material
1 hour ago
UZMA replied to +M.Tariq Malik's discussion ENG501 History of English Language Online Quiz No 01 spring 2020 Solution Discussion in the group ENG501 History of English Language
1 hour ago
UZMA replied to +M.Tariq Malik's discussion ENG501 History of English Language Online Quiz No 01 spring 2020 Solution Discussion in the group ENG501 History of English Language
1 hour ago
UZMA commented on +M.Tariq Malik's group ENG501 History of English Language
1 hour ago
+M.Tariq Malik replied to +M.Tariq Malik's discussion PAD603 GDB No 01 Fall 2020 Solution / Discussion in the group PAD603 Governance, Democracy and Society
1 hour ago
UZMA joined +M.Tariq Malik's group
1 hour ago
+M.Tariq Malik added a discussion to the group PAD603 Governance, Democracy and Society
1 hour ago

Looking For Something? Search Here

© 2020   Created by +M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service

.