We are here with you hands in hands to facilitate your learning & don't appreciate the idea of copying or replicating solutions. Read More>>

Looking For Something at vustudents.ning.com? Click Here to Search

www.bit.ly/vucodes

+ Link For Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution

www.bit.ly/papersvu

+ Link For Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More


Dear Students! Share your Assignments / GDBs / Quizzes files as you receive in your LMS, So it can be discussed/solved timely. Add Discussion

How to Add New Discussion in Study Group ? Step By Step Guide Click Here.

آؤٹرنیٹ کردے گا انٹرنیٹ کی چُھٹی! OuterNet A new Concept of Internet

انٹرنیٹ، ایک جادوئی ٹیکنالوجی، جس نے ہماری دنیا بدل کر رکھ دی۔

آج شاید ہی کوئی شعبہ اس ٹیکنالوجی کے دائرۂ اثر سے باہر ہو۔ ہر شعبے میں بالواسطہ یا بلاواسطہ انٹرنیٹ کا عمل دخل نظر آتا ہے۔ الغرض انٹرنیٹ ٹیکنالوجی روزمرّہ زندگی کا حصّہ بن چکی ہے۔ انٹرنیٹ سے استفادہ کرنے کے لیے ہم مختلف کمپنیوں کے محتاج ہیں۔ انہیں انٹرنیٹ سروس پرووائیڈر (آئی ایس پیز) کہا جاتا ہے۔ ہم ان کمپنیوں کی فیس ادا کر کے انٹرنیٹ کنکشن حاصل کرتے ہیں اور انٹرنیٹ کے ذریعے دنیا سے جُڑ جاتے ہیں۔

یہ بھی حقیقت ہے کہ اس جادوئی ٹیکنالوجی سے دنیا کے ہر خطے کا فرد مستفید نہیں ہو رہا۔ کہیں آئی ایس پیز کا مسئلہ ہے، تو کہیں غربت اور پس ماندگی انٹرنیٹ سے استفادہ کرنے کی راہ میں حائل ہے۔

اس صورت حال میں آپ انٹرنیٹ تک دنیا کے ہر فرد کی بلامعاوضہ رسائی کا تصور کر سکتے ہیں؟ ایسا ہو سکتا ہے، کیوں کہ ایک تنظیم کی جانب سے اس تصور کو حقیقت میں بدلنے کے لیے کام شروع کر دیا گیا ہے۔ کہا جارہا ہے کہ دو برس کے بعد دنیا کا ہر فرد مفت انٹرنیٹ استعمال کرے گا۔

یہ دعویٰ نیویارک میںمیڈیا ڈیولپمنٹ انویسٹمنٹ فنڈ ( ایم ڈی آئی ایف) نامی تنظیم نے کیا ہے اور اس پر عملی کام بھی تیزی سے جاری ہے۔ یہ منصوبہ ’’آؤٹرنیٹ‘‘ کے نام سے آگے بڑھ رہا ہے۔

’’ آؤٹرنیٹ ‘‘ پروجیکٹ کے لیے ’’ ڈیٹا کاسٹنگ‘‘ ٹیکنالوجی استعمال کی جائے گی۔ اس ٹیکنالوجی کے تحت ڈیٹا ریڈیائی لہروں کی صورت میں بھیجا جاتا ہے۔ ایم ڈی آئی ایف کا کہنا ہے کہ اس ٹیکنالوجی کی مدد سے انٹرنیٹ کو خلا سے دنیا بھر میں پھیلایا جاسکے گا۔ اس مقصد کے لیے سیکڑوں چھوٹے مصنوعی سیارے ارضی مدار میں بھیجے جائیں گے۔ یہ بالکل ایسے ہی ہوگا جیسے سیٹیلائٹ چینلز کے سگنلز خلا سے زمین پر پہنچتے ہیں اور پھر ٹیلی ویژن سیٹ انہیں کیچ کر لیتے ہیں۔

زمین کے زیریں مدار میں بھیجے جانے والے مصنوعی سیارے دنیا بھر میں موجود مختلف اسٹیشنوں سے ڈیٹا وصول کریں گے اور ’’یوزر ڈیٹاگرام پروٹوکول‘‘ نامی تیکنیک کے ذریعے اس ڈیٹا کو زمین پر بھیج دیں گے۔

سید کریم اس پروجیکٹ کے سربراہ ہیںِ۔ ان کا کہنا ہے کہ ’’آؤٹر نیٹ‘‘ کے لیے مطلوبہ ٹیکنالوجی پہلے ہی موجود ہے، جس کی وجہ سے اس منصوبے کی تکمیل میں زیادہ وقت صرف نہیں ہوگا۔ رواں برس جون میں یہ تنظیم ناسا سے بین الاقوامی خلائی اسٹیشن پر اس ٹیکنالوجی کے آزمائشی تجربات کے لیے اجازت طلب کرے گی، جس کے بعد جون 2015ء میں ارضی مدار میں مصنوعی سیاروں کو بھیجا جائے گا۔ اس کے ایک برس بعد ’’آؤٹر نیٹ‘‘ حقیقت بن جائے گا۔

اس بات کا امکان بھی ہے کہ ٹیلی کام اور انٹرنیٹ سروس فراہم کرنے والی کمپنیاں اس منصوبے کی راہ میں رکاوٹیں ڈالنے کی کوشش کریں، مگر سید کریم کے مطابق وہ اور اس منصوبے کی ٹیم ان کا مقابلہ کرنے کے لیے پوری طرح تیار ہے۔

-: Outernet :-

Information for the World from Outer Space

Unrestricted, globally accessible, broadcast data.

Quality content from all over the Internet.

Available to all of humanity.

For free.

For more Information

Visit

https://www.outernet.is/

+ How to Follow the New Added Discussions at Your Mail Address?

+ How to Join Subject Study Groups & Get Helping Material?

+ How to become Top Reputation, Angels, Intellectual, Featured Members & Moderators?

+ VU Students Reserves The Right to Delete Your Profile, If?


See Your Saved Posts Timeline

Views: 1174

.

+ http://bit.ly/vucodes (Link for Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution)

+ http://bit.ly/papersvu (Link for Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More)

+ Click Here to Search (Looking For something at vustudents.ning.com?)

+ Click Here To Join (Our facebook study Group)

Reply to This

Replies to This Discussion

o wao very informative sharing...

superbbbbbbb discussion

2 saal bad kue abbe ho jata na......................................idr to roz sgnl nae hote net k :(

waow great muftaaaaa 

thnx for sharing

very old news...
near about 3 to 5 year old....
some advantages we use faster net
having disadvantages
mostly people not know about it,, very dangerous because high fi beta and Gama type waves ......they distrust human bodies ....in the way of very complex human diseases

m.usama905 

ya that's true.............

infromativ

Informative sharing 

Thanks for sharing sir 

Informative Sharing

Nice Discussion

Keep it up

RSS

Latest Activity

Muhammad Bilal replied to + " J ɨ y α •" ⋆'s discussion Let's celebrate the Birthday of our Beloved Mod + "αяsαℓ " Ќąƶµяɨ •"
15 minutes ago
khaaniii replied to Rana Ali's discussion Ek Shakhs Ko Dekha Tha Taroon Ki Tarah Hum Ne
33 minutes ago
khaaniii liked Rana Ali's discussion Ek Shakhs Ko Dekha Tha Taroon Ki Tarah Hum Ne
34 minutes ago
hareem mughal replied to +!!!StRaNGeR!!! +'s discussion ﺗﺮﺍ ﻧﺎﻡ ﺗﮏ ﺑﮭﻼ ﺩﻭﮞ، ﺗﺮﯼ ﯾﺎﺩ ﺗﮏ ﻣﭩﺎ ﺩﻭﮞ
1 hour ago
hareem mughal liked +!!!StRaNGeR!!! +'s discussion ﺗﺮﺍ ﻧﺎﻡ ﺗﮏ ﺑﮭﻼ ﺩﻭﮞ، ﺗﺮﯼ ﯾﺎﺩ ﺗﮏ ﻣﭩﺎ ﺩﻭﮞ
1 hour ago
hareem mughal replied to +!!!StRaNGeR!!! +'s discussion اپنا خاکہ لگتا ھُوں
1 hour ago
hareem mughal liked +!!!StRaNGeR!!! +'s discussion اپنا خاکہ لگتا ھُوں
1 hour ago
hareem mughal replied to +!!!StRaNGeR!!! +'s discussion ﻭﮦ ﺍﺩﺍﺋﮯ ﺩﻟﺒﺮﯼ ﮨﻮ ﮐﮧ ﻧﻮﺍﺋﮯ ﻋﺎﺷﻘﺎﻧﮧ
1 hour ago
hareem mughal liked +!!!StRaNGeR!!! +'s discussion ﻭﮦ ﺍﺩﺍﺋﮯ ﺩﻟﺒﺮﯼ ﮨﻮ ﮐﮧ ﻧﻮﺍﺋﮯ ﻋﺎﺷﻘﺎﻧﮧ
1 hour ago
hareem mughal replied to +!!!StRaNGeR!!! +'s discussion نگاہِ شوق میں آ، پردہ گماں سے نکل
1 hour ago
hareem mughal liked +!!!StRaNGeR!!! +'s discussion نگاہِ شوق میں آ، پردہ گماں سے نکل
1 hour ago
hareem mughal replied to +!!!StRaNGeR!!! +'s discussion اجنبی شہر کے اجنبی راستے _
1 hour ago

© 2019   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service

.