Latest Activity In Study Groups

Join Your Study Groups

VU Past Papers, MCQs and More

وہ پانی کی لہروں پہ کیا لکھ رہا تھا
خدا جانے حرف دعا لکھ رہا تھا


محبّت میں نفرت ملی تھی اسے بھی
جو ہر شخص کو بے وفا لکھ رہا تھا


لکھا جس نے ناول وفا کا ادھورہ
وہی پیار کی انتہا لکھ رہا تھا


بھلا کرتے کرتے گزاری زندگی
مگر پھر بھی خود کو برا لکھ رہا تھا


ذرا اسکی آنکھوں سے آنسو نہ نکلے
کے جس وقت وہ لفظ سزا لکھ رہا تھا


نماز محبّت میں وہ اپنے

!ہوے تھے جو سجدے قضا لکھ رہا تھا

Views: 113

Reply to This

Replies to This Discussion

Qalam mein zor jitna hai judai ki badolat hai,

Milnay kay bad likhnay wale likhna chore dete hain.

nice 

bht achi bt he...

Hayeee 

bary sukhan shanaas lg lgty hein ap .. ;p

nice by nabeel and Zoey D

thnks bilal je

RSS

© 2021   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service