We are here with you hands in hands to facilitate your learning & don't appreciate the idea of copying or replicating solutions. Read More>>


Looking For Something at vustudents.ning.com? Click Here to Search


میں آج بھی حسین ہوں


میں نے بہت عرصہ سے اپنا چہرہ ہی نہیں دیکھا تھا آج جو آئینے کے روبرو کھڑا ہوا تو احساس ہوا وقت کتنا بدل گیا ہے، کل جہاں تازگی تھی آج وہاں افکار کی حدت سے نقشہ پگھل سا گیا ہے۔ میں پل بھر کو بجھ ہی گیا اور دل بھر آیا، آنکھوں کی نمی نے ماضی کے دریچے کھول دیے اس کا حسن آنکھ میں اتر گیا۔ ململ سی گھٹا جیسی زلفیں، منفرد ادا، دلفریب سراپا ، اک زمانہ تھا اس پر فدا، اس کی ایک دید ، ایک نظر کے لیے گھنٹوں انتظار ہوتا تھا۔ کیا زمانہ تھا، بس جستجو تھی ہر دل کی وہ، میں بھی اس کا طا لب تھا اور اپنے احباب میں کافی نمایاں تھا، مگر طلب ، تمنا اور کسک بن گئ ۔ اس سے الفت کا اظہار کیا اور ذات تماشہ بن گئ۔ اس یاد نے دل کو اور رنجیدہ کردیا ۔ میں نے پھر اپنا عکس آئینے میں دیکھا اور اس کو سوچنے لگا۔ وہ بے حد حسین تھی اور شاید خطرناک حد تک۔ دل بہت مشکل سے قابو ہوتا تھا اس کے روبرو، خیال ہمیشہ ہی بہک جاتا تھا۔ من اس کے لبوں کی نرمی کے لیے تڑپ اٹھتا تھا ۔ مگر وہ ہمیشہ ہی صاف بچ جاتی تھی۔ یقینا وہ بھی یہ سب جانتی تھی ، نگاہوں کے سوال پہچانتی تھی۔ مگر وہ ان باتوں پر خوف ذدہ ہونے کے بجا ئے محظوظ ہوتی تھی ۔ آہستہ آہستہ حسین ہونے کا احساس اس کے اندر اتنا بڑ گیا کہ اس نے ہم واجبی صورت والوں کی محفل میں آنا ہی چھوڑ دیا۔ میں ماضی کے اوراق شاید اور پڑھتا کہ مجھے برسوں بعد اس سے ہوئی کل کی ملاقات یاد آگئ ۔ کل ہی تو ملی ہے بینک میں بل جمع کرانے آئی تھی ۔ کتنی نازک تھی وہ، کل اس کا سراپا کتنا اجنبی سا لگا تھا ، شباب ڈھل سا گیا تھا، آخر عمر کی بھی بات ہوتی ہے مگر جانے کیوں مجھے اس کی آنکھوں میں جہاں بھر کی ویرانی اور تنہائی نظر آئی تھی۔ یوں لگا کہ وہ اپنے حسن کے سحرمیں آپ اتنا محو ہو گئی ہو گی کہ اپنی ہی ذات میں تنہا رہ گئی ہو گی ۔ یقینا وہ اپنے ہی حسن کے سمندر میں ڈوب کر مر چکی تھی ۔ مجھے کل دیکھی اس کی آنکھیں بھرپور انداز سے یاد آگیں اور میں پھر آئینے میں اپنی آنکھیں دیکھنے لگا ۔ مجھے اپنی آنکھوں میں جا نے کتنی ہی محفلیں نظر آنے لگیں، کتنے ہی نام زبان پر آ گئے۔ حدت سے پگھلے چہرے پر آج بھی کتنی ہی محبتوں کے سائے نظر آ گئے ۔
میں مسکرانے لگا، رب کا شکر ادا کرنے لگا۔ دل و ذہن میں یہ خیال امر ہو گیا کہ میں کل بھی حسین تھا اور میں آج بھی حسین ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Share This With Friends......

+ Click Here To Join also Our facebook study Group.

This Content Originally Published by a member of VU Students.

+ Prohibited Content On Site + Report a violation + Report an Issue


..How to Join Subject Study Groups & Get Helping Material?..


Views: 259

See Your Saved Posts Timeline

Comment

You need to be a member of Virtual University of Pakistan to add comments!

Join Virtual University of Pakistan

Comment by + .• муѕтєяισυѕ gιяℓ •.+ on November 2, 2013 at 1:41pm

thansk unknowwn

Comment by ɖɒȠλɒȽɄɈɌȪɀȊ on November 2, 2013 at 1:32pm

Waisy bi rishton ki mazbooti ka inhasaar dillon k relation sy hota hai na k chehroon ki chamak damak sy

Comment by ɖɒȠλɒȽɄɈɌȪɀȊ on November 2, 2013 at 1:26pm

Daimi sach bs aik hi hai dunya me chehra haseen ho na ho Dil khubsurat hona chahiay !!!

Comment by Criminal on November 2, 2013 at 12:56pm

 nice 

Comment by + .• муѕтєяισυѕ gιяℓ •.+ on November 2, 2013 at 12:52pm

thanksssss

Comment by Invincible® on November 2, 2013 at 12:49pm

well said agree with crazy 

Comment by + .• муѕтєяισυѕ gιяℓ •.+ on November 2, 2013 at 12:21pm

thanks for ur comments crazy

Comment by + .• муѕтєяισυѕ gιяℓ •.+ on November 2, 2013 at 12:21pm

© 2019   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service