We are here with you hands in hands to facilitate your learning & don't appreciate the idea of copying or replicating solutions. Read More>>

Looking For Something at vustudents.ning.com? Click Here to Search

www.bit.ly/vucodes

+ Link For Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution

www.bit.ly/papersvu

+ Link For Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More

پاپا نے پادری بنانا چاہا ۔۔۔مگر۔۔۔؟

پاپا نے پادری بنانا چاہا ۔۔۔مگر۔۔۔؟
امیر حمزہ





عمر ابراہیم اڈیلو سے میری پہلی ملاقات جماعت اسلامی کے دفتر منصورہ میں ہوئی۔ سود کے انسداد کے ضمن میں یہ میٹنگ تھی۔
اس میٹنگ میں پتہ چلا کہ عمر ابراہیم صاحب سپین کے نومسلم ہیں
اور لاہور میں رہائش رکھتے ہیں چنانچہ میں چند دن کے بعد ان کے
ھر میں تھا۔ عمر ابراہیم سپین سے تعلق رکھتے ہیں، وہ سپین جسے ہسپانیہ بھی کہا جاتا ہے جہاں مسلمانوں نے آٹھ سو سال حکومت کی ہے، عمر ابراہیم صاحب کی پاکستانی اہلیہ محترمہ نے ان الفاظ کے ساتھ تعارف کروایا کہ ان کو باسک کے پٹھان سمجھ لیں۔ عمر ابراہیم صاحب کی اپنی زبان تو ہسپانوی ہے مگر وہ انگریزی بھی مادری زبان کی طرح بولتے ہیں۔میرے والد صاحب زبردست قسم کے مذہبی مسیحی تھے کیتھولک فرقے سے ان کا تعلق تھا۔ میری تین بہنیں جبکہ میں اپنے والد کا واحد اور اکلوتا بیٹا تھا۔ والد نے نذر مان رکھی تھی کہ مجھے پادری بنائیں گے۔ مسیحی دنیا کا بڑا عالم اور پریسٹ بنائیں گے، چنانچہ میں نے ہوش سنبھالنے پر مذہبی سکول میں جاناشروع کر دیا۔ وہاں تعلیم حاصل کرنے لگ گیا، 2سالہ تعلیم کے بعد میں نے دو سال کا عرصہ صوفیوں کی خانقاہ میں گزارا۔ یہ تثلیث اور دنیا چھوڑنے کا نظریہ مجھے اچھا نہیں لگتا تھا۔
 مجھے یہ سارا کچھ غیر فطری سا دکھائی دیتا تھا، میرا ذہن اس
سے مطمئن نہ تھا چنانچہ میں نے اپنی زندگی کے یہ چار سال دو
سال مدرسہ کے اور دو سال خانقاہ کے لگانے کے بعد اپنے والد
سے صاف طور پر کہہ دیا کہ میں یونیورسٹی کی اعلیٰ تعلیم حاصل
کرنا چاہتا ہوں۔ میں پادری اور مسیحی صوفی نہیں بنوں گا۔ والد
صاحب میری یہ بات سن کر بڑے مایوس ہوئے اس لئے کہ میرے بارے
میں انہوں نے جو خواب دیکھا تھا میرے جواب سے وہ خواب چکنا
چور ہو چکا تھا۔ چنانچہ والد صاحب نے مجھے سکول میں داخل کروا
دیا اس کے بعد میں سپین کے دارالحکومت میڈرڈ میں یونیورسٹی
میں تعلیم حاصل کرنے لگا میری یہ تعلیم زراعتی معاشیات پر تھی۔
1984ء میں جبکہ میں یونیورسٹی سے فارغ ہونے کے قریب تھا۔
میری تعلیم تکمیل کے آخری مرحلے پر تھی تو اس دوران میری
ملاقات اللہ کے ایک ایسے بندے سے ہوئی جس کے ذریعے اللہ نے
میری زندگی بدل دی۔ یہ بندہ برطانیہ کے علاقے سکاٹ لینڈ کا رہنے
والا تھا۔ اس نے اسلام قبول کیا اور پھر اسلام کا داعی اور مبلغ بن
گیا۔ وہ میڈرڈ میں مقیم تھے اور اہل سپین کو اسلام کی دعوت دے
رہے تھے۔ ان کا نام عبدالقادر ہے۔ انہوں نے گریناڈا میں بھی مسجد
بنائی، جنوبی افریقہ کے کیپ ٹاؤن شہر میں بھی مسجد بنائی دنیا
بھر میں مساجد بناتے ہیں اور اسلام کی دعوت دیتے ہیں۔ بس انہوں
نے یونیورسٹی میں مجھے دیکھا اور میں نے ان کی طرف دیکھا،
انہوں نے مجھے بلا لیا، بات شروع ہو گئی اور یوں لگا جیسے برسوں
کی شناسائی ہے، شیخ عبدالقادر کا جس جگہ قیام تھا۔ میں وہاں
جانے کو ان کے ساتھ ہی چل دیا۔ وہ نماز پڑھنے لگ گئے۔ میں نے
دیکھا تو نماز کو ’’یوگا‘‘ سمجھا۔ لیکن پھر سوچا۔ یہ یوگا تو نہیں لگتا
کوئی اور ہی چیز لگتی ہے۔ بہرحال! وہ جب فارغ ہوئے تو میں نے
پوچھ لیا کہ یہ آپ کیا کر رہے تھے؟ کہنے لگے، میں مسلمان ہوں،
کے حضور عبادت کر رہا تھا۔ مجھے یہ سن کر ایک جھٹکا لگا، جھٹکا
اس لئے لگا کیونکہ میرا خیال تو یہی تھا کہ عرب ہی مسلمان ہوتے
ہیں۔ یورپ کے لوگ مسلمان نہیں ہوتے، اب یورپ کا ایک باشندہ
مسلمان ہے۔ برطانیہ کے علاقے سکاٹ لینڈ میں پیدا ہونے والا
مسلمان کیسے ہو گیا، میرے لئے یہ بات تعجب کی تھی اور یہ تو
بہرحال حقیقت تھی کہ عبدالقادر صاحب اب مسلمان تھے اور میرے
سامنے تھے۔مجھے کہنے لگے، معبود تین نہیں بلکہ ایک ہے کہو اور
بولو اس کا نام ’’اللہ‘‘ اور پھر وہ اللہ اللہ اللہ کہنے لگے۔ میں نے بھی
تین بار اللہ اللہ اللہ کہہ دیا۔ اس سے یوں ہوا جیسے میرے دل کو
سکون آ گیا ہو۔ چین آ گیا ہو۔ وہ پیاس جو مجھے بچپن میں تھی اس
کا مداوا ہو گیا ہو۔ شیخ عبدالقادر نے اب مزید کوئی بات نہیں کی اور
میں یہاں سے رخصت ہو گیا میری حالت کو دیکھ کر شاید انہوں نے
مجھے ابتداء میں اتنی ہی خوراک دینا مناسب سمجھی۔
 میں اپنے کسی کام کے سلسلہ میں ’’تیونس‘‘ گیا۔ میں اپنے
یونیورسٹی کے دوستوں کے ساتھ یہاں کے ایک گاؤں میں تھا۔ وہاں
ہم دوست اکٹھے کھا پی رہے تھے۔ گپ شپ لگا رہے تھے کہ اچانک
اذان کی آواز بلند ہوئی اللہ اکبر اللہ اکبر۔۔۔ اب جب میں نے اللہ کا نام
سنا تو اس نام نے میرے دل پر ایسا اثر کیا کہ میں اٹھ کھڑا ہوا۔
دوستوں نے پوچھا کدھر؟ میں نے کہا اللہ کی جانب۔ کہنے لگے، یہ
کیا؟ میں نے کہا، اللہ بلا رہا ہے، مسلمانوں کی مسجد میں جا رہا
ہوں، کہنے لگے، وہاں تیرا کیا کام؟ کہا۔۔۔ بس جانا ہے وہاں مسلمانوں
کی نماز دیکھوں گا اور پڑھوں گا۔ کہنے لگے، مسلمان تجھے ماریں
گے۔ ہو سکتا ہے قتل بھی کر دیں، یہ گاؤں ہے لوگ بھی نا جانے
کیسے ہوں؟ تو ہمیں بھی مصیبت میں ڈالے گا۔ میں نے کہا کہ کچھ
نہیں ہوتا اور دوستوں کو چھوڑ کر مسجد کی طرف چلا گیا۔ وہاں
لوگوں کو دیکھا ہاتھ منہ دھو رہے ہیں، مجھے کیا پتہ وضو کس چیز کا
نام ہے؟ چنانچہ میں نے ہاتھ منہ دھوئے اور مسجد میں چلا گیا صف
میں کھڑا ہو گیا، اب میں اپنے اردگرد دیکھتا اور جس طرح وہ لوگ کر
رہے تھے اسی طرح کرنے کی کوشش کرنے لگا۔ دائیں بائیں والوں
کو ہاتھ لگ جاتا، بیٹھنے لگتا تو ٹانگ کو اس کے مطابق کرنے کی
کوشش کرتا تو پاؤں لگ جاتا۔ تیونس کی اس مسجد کے نمازی جو
میرے دائیں بائیں تھے حیران تھے کہ یہ آج کون سا نمازی آ گیا ہے۔
یہ تو اللہ کا شکر ہے کہ جوتے پہن کر نہیں گیا، وگرنہ ناجانے کیا
ہوتا؟ اب نمازختم ہوئی تو دائیں بائیں کے نمازی میری طرف حیرانی
سے دیکھ رہے تھے۔ مجھ سے عربی میں بات کرنے لگے تو مجھے
عربی آتی نہیں تھی۔ یوں بات آگے بڑھی اور لوگ میرے اردگرد
اکٹھے ہو ئے۔ اتنے میں امام صاحب بھی آ گئے، میں نے انہیں
فرانسیسی زبان میں کہا میں مسلمان ہوں، امام صاحب نے اپنے
مقتدیوں کو کہا یہ کوئی نیا نیا مسلمان ہے اسے چھوڑ دو۔اب میں بڑا
حیران تھا کہ میں نے کیا اعلان کر دیا کہ کہہ دیا میں مسلمان ہوں۔
مگر یہ میرے دل کی گواہی تھی، اب جب میں واپس میڈرڈ گیا تو ایئر
پورٹ سے سیدھا شیخ عبدالقادر کی خدمت میں گیا۔ میں جب ان
کے ہاں پہنچا تو خوبصورت اتفاق کہ وہ دروازہ پر ہی کھڑے تھے انہوں
نے مجھے چہرے سے پہچان لیا اور کہا اندر آ جاؤ۔ مجھے اللہ سے
محبت اور نماز پڑھنے کا تو جنون ہو گیا کہ کب وقت ہو گا کہ میں
نماز میں چلا جاؤں گا۔ دل تو یہ چاہتا تھا کہ ہر لمحہ نماز ہی میں
رہوں، نماز اور اللہ کا ذکر۔۔۔ یہ دن رات میرا کام تھا، میں نے سورہ
فاتحہ بھی یاد کر لی تھی۔ تینوں قل اور نماز کی دعائیں یاد کر لی
تھیں۔ رمضان بھی آ گیا تھا، میڈرڈ میں واحد مسجد جو مسلمانوں
کی تھی وہ بھی ایک چھوٹا سا کمرہ تھا جسے مراکش کے لوگوں
نے نماز کے لئے بنایا تھا۔ میں وہاں چلا گیا اور اعلانیہ طور پر کلمہ
شہادت پڑھ لیا، میں اپنے شیخ عبدالقادر کے ہمراہ 25 سال رہا۔
پڑھتا بھی رہا اور دین کا کام بھی کرتا رہا۔۔۔

قارئین کرام! یوں عمر ابراہیم جسے باپ پادری بنانا چاہتا تھا وہ اسلام
کا داعی بن گیا۔ (الحمدللہ (
----------------------------------------------------------
عمر ابراہیم وڈیلو درہم و دینار تحریک کے روحِ رواں ہیں اور سودی
نظام کے متبادل اسلامی درہم و دینار پر مبنی بلاسود معاشی نظام
کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں۔  پاکستان میں کئی بار سود کے خلاف
عدالت کے دروازے کھٹکھٹائے گئے ۔ ہر کوئی سوال یہ پوچھتا تھا کہ 
"سودی نظام کا متبادل کیا ہے؟ اب عمر ابراہیم وڈیلو صاحب ستر
صفحات پر مشتمل ایک متبادل نظام تحریر کر کے لائے ہیں "۔
وفاقی شرعی عدالت ضیاء الحق نے بنائی تھی اور ساتھ یہ پابندی
لگادی تھی کہ یہ مالی معاملات کے بارے میں دس سال تک کوئی
کیس نہیں سن سکے گی۔ جیسے ہی 1991ء میں پابندی ختم
ہوئی لوگ وفاقی شرعی عدالت میں چلے گئے۔ شرعی عدالت نے
سود کے خلاف فیصلہ دے دیا۔ نواز شریف حکمران تھے ، وہ اس
فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ چلے گئے۔ اس کے بعد بے نظیر ، پھر
نواز شریف، سب کے دور میں یہ کیس لٹکتا رہا۔ پرویز مشرف نئے
نئے تخت نشین ہوئے تھے کہ سپریم کورٹ کے شریعت بنچ نے سود
کے خلاف فیصلہ دے دیا۔ ایک دم ایوانوں میں بھگدڑمچ گئی۔ ایک
نجی بینک کی طرف سے نظر ثانی کی اپیل کروائی گئی۔ تمام
عدالتی اصولوں کو بالائے طاق رکھتے ہوئے نئے بنچ نے پہلے بنچ کا
فیصلہ کالعدم قرار دے دیا اور پھراس کی جگہ خود فیصلہ لکھنے کے
بجائے کیس کو لٹکانے کے لیے واپس وفاقی شرعی عدالت میں
بھیج دیا۔گزشتہ دس سال سے یہ کیس وہاں گرد آلود فائلوں میں پڑا تھا۔
21اکتوبر 2013 ء کو وفاقی شرعی عدالت میں ایک بار پھر اس بحث
کا آغاز ہوا کہ سود حرام ہے یا حلال، کون سا سود حرام ہے اور کیا
موجودہ دور میں سود کو ترک کر کے ہم زندہ رہ سکتے ہیں۔ یہ سب
اس لئے ممکن ہوا کہ شریعت کورٹ سے لے کر سپریم کورٹ کے
شریعت بنچ تک ہر کوئی ایک ہی سوال کرتا تھا کہ "سودی نظام کا
متبادل کیا ہے؟" لیکن اب درہم و دینار تحریک کے روحِ رواں عمر
ابراہیم وڈیلو نے ستر صفحات پر مشتمل ایک متبادل نظام تحریر کیا
اور اسے نئی اپیل کا حصہ بنایا گیا ہے۔

+ How to Follow the New Added Discussions at Your Mail Address?

+ How to Join Subject Study Groups & Get Helping Material?

+ How to become Top Reputation, Angels, Intellectual, Featured Members & Moderators?

+ VU Students Reserves The Right to Delete Your Profile, If?


See Your Saved Posts Timeline

Views: 134

.

+ http://bit.ly/vucodes (Link for Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution)

+ http://bit.ly/papersvu (Link for Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More)

+ Click Here to Search (Looking For something at vustudents.ning.com?)

+ Click Here To Join (Our facebook study Group)

Comment

You need to be a member of Virtual University of Pakistan to add comments!

Join Virtual University of Pakistan

Comment by iOS on May 18, 2014 at 12:03am

Very Nice.

we should learn from it.

keep sharing.

Comment by +♥ ÁŔZỠỠ ♥ on May 14, 2014 at 8:33pm
nyc sharing
ALLAH humry dilo ko b apni mohbat k noor sy monver kary
ameen

Latest Activity

Profile Icon༺łℳℜ₳₦༻ immy, MUHAMMAD USMAN and Amina Azeem joined + M.Tariq Malik's group
4 hours ago
+ ! ! ! ! Mehαr Mαh꧂ replied to + "αяsαℓ " Ќąƶµяɨ •"'s discussion The World's most expensive Proposal
4 hours ago
+ ! ! ! ! Mehαr Mαh꧂ liked + "αяsαℓ " Ќąƶµяɨ •"'s discussion The World's most expensive Proposal
5 hours ago
+ ! ! ! ! Mehαr Mαh꧂ liked +***piya o ry piya***+'s discussion eng301 solution chahiyaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaa
5 hours ago
Mahay Jawad replied to Mian Ali's discussion MCM520 assignment 1 solution Fall 2019 in the group MCM520 Contemporary Mass Media
5 hours ago
Profile IconMahay Jawad and kaaydeen 786 joined + M.Tariq Malik's group
5 hours ago
Ali Khan joined + M.Tariq Malik's group
6 hours ago
Prince Allen replied to ayesha's discussion CS607 Assignment No.1 Solution & Discussion Due Date: 15-11-2019 in the group CS607 Artificial Intelligence
6 hours ago
Prince Allen joined + M.Tariq Malik's group
6 hours ago
Rehana Awan BSSE(7th semester) replied to +¢αяєℓєѕѕ gιяℓ's discussion CS506 - Web Design and Development Assignment No.1 Due Date Nov 15, 2019 in the group CS506 Web Design and Development
7 hours ago
Rehana Awan BSSE(7th semester) replied to + M.Tariq Malik's discussion CS311 Assignment No 01 Fall 2019 Solution & Discussion Due Date: 15-11-2019 in the group CS311 Introduction to Web Services Development
7 hours ago
Rehana Awan BSSE(7th semester) joined + M.Tariq Malik's group
7 hours ago
Rehana Awan BSSE(7th semester) replied to + M.Tariq Malik's discussion CS605 Software Engineering-II Assignment No 01 Fall 2019 Solution & Discussion in the group CS605 Software Engineering-II
7 hours ago
kaaydeen 786 replied to Mian Ali's discussion MCM520 assignment 1 solution Fall 2019 in the group MCM520 Contemporary Mass Media
7 hours ago
ALEEM QAMAR replied to + M.Tariq Malik's discussion MTH302 Business Mathematics & Statistics Assignment No 01 Fall 2019 Solution & Discussion in the group MTH302 Business Mathematics & Statistics
7 hours ago
ALEEM QAMAR joined + M.Tariq Malik's group
7 hours ago
Muhammad Azeem joined + M.Tariq Malik's group
8 hours ago
Hannah chaudhary updated their profile
8 hours ago
Ikra butt posted a status
"https://youtu.be/ItfTdt9kJik mgt211 gdb solution 2019 correct solution"
8 hours ago

Today Top Members 

© 2019   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service