We are here with you hands in hands to facilitate your learning & don't appreciate the idea of copying or replicating solutions. Read More>>

Looking For Something at vustudents.ning.com? Click Here to Search

www.bit.ly/vucodes

+ Link For Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution

www.bit.ly/papersvu

+ Link For Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More


Dear Students! Share your Assignments / GDBs / Quizzes files as you receive in your LMS, So it can be discussed/solved timely. Add Discussion

How to Add New Discussion in Study Group ? Step By Step Guide Click Here.

یہ استاد ہی جانتا ہے کہ اسے کیا ہوا ہے

اس کا دعوی تھا میں جس عورت کے پیچھے پڑ جاؤں وہ پھر مجھ سے نہیں بچ سکتی ۔ تھی بھی حقیقت ۔۔ اس کے دشمن بھی مانتے تھے ۔ ایسے شکاری رشک کرتے تھے اس پر ۔ کامیابی کی وجہ پوچھتے ۔ تو سینہ پھلاتا ۔ سینے پہ ہاتھ مارتا ۔ خوب چوڑا ہو کے کہتا ۔ اوئے یہ اک فن ہے ۔ اور میں اس فن میں پی ایچ ڈی ہوں ۔ کڑی کی ٹور دیکھ کر ہی پہچان جاتا ہوں کس کٹیگری کی ہے ۔ مجھے پتا چل جاتا ہے ۔ چلنے والی ہے ۔ یا ۔چل چلاؤ کرانے والی ۔۔ دام میں آنے والی ہے یا نہیں ۔۔ پھر جو اپنے مطلب کی نظر آتی ہے اس کے پیچھے پڑ جاتا ہوں ۔اور ۔۔ ۔ ۔
وہ شادی شدہ بھی تھا دو بیٹیوں اک بیٹے کا باپ بھی ۔ بیوی اپنے کام سے کام رکھنے والی ۔ پہلی بیٹی پیدا ہوئی تو اسے سمجھایا اسے دیکھ ۔ زہن ویسے بھی غلط ہے ۔ غیرت مار دیتا ہے ۔ لیکن اب تو تو بیٹی کا باپ بن گیا ہے ۔ اب بس کر دے ۔ قرض نہ چڑھا ۔ کل بیٹی کو اتارنا پڑے گا ۔ ایسے وقت وہ ہتھے سے اکھڑ جاتا ۔ اوئے کس کی ہمت ہے میرے گھر میں نقب لگائے ۔؟ اور میں جو کرتا ہوں شریف ذادیوں کے ساتھ نہیں کرتا. 
سمجھانے والے دبک جاتے ۔ وہ اپنے اسی معمول پر کاربند رہا ۔ اور بھی بہت غلط دھندے تھے اس کے ۔ جیل یاترا اکثر ہوتی ۔ پریشان نہ ہوتا ۔ جیل کو سسرال کہتا ۔ اس کی بیٹی بارہ سال کی تھی جب اک بار پھر جیل جانا پڑ گیا ۔ بیوی کو ہدایات دیں ۔۔ بھلی لوک ۔ اب کے لمبا ہاتھ مارا ہے ۔ سسرال میں بھی لمبے ٹائم تک رہنا پڑے گا ۔ تو ٹینشن نہ لینا تجھے سب کچھ گھر میں ملے گا ۔ ۔ میری دھی رانیوں اور شہزادے کا خیال رکھنا ۔ سسرال واقعی لمبا ہو گیا ۔پانچ سال تک مہمان کیے رکھا ۔ پانچ سال بعد لوٹا ۔ تو گھر میں تبدیلیاں آ گئیں تھیں ۔ بیوی کے بالوں میں چاندی اتر آئی تھی ۔ بڑی بیٹی جوانی کی دہلیز پر کھڑی تھی ۔ پہلا دن مصروف گزرا ۔ رات کو بیوی نے اسے آگاہ کیا ۔ دیکھ اب جلدی سے کوئی لڑکا دیکھ کر بیٹی کو بیاہ دے ۔ تیرے عجب الٹ دھندے کہیں پھنس گیا تو میں کیا کروں گی ۔۔ اس نے ہاں ہوں کر دی ۔ دوسرے دن جب آنا جانا کم ہوا تو اس نے غور سے بیٹی کو دیکھا ۔ بے پناہ حسین تھی وہ ۔ چال ڈھال دیکھی اور ۔ تبھی پی ایچ ڈی کی ڈگری بول پڑی ۔ ۔ اندر کا علم بول پڑا ۔ وہ تھرا کر رہ گیا ۔ یہ یہ کیا ہو گیا ۔ ایسا کیسے ہو گیا۔.؟ یہ نہیں ہو سکتا ضرور غلط فہمی ہوئی ہے مجھے ڈگری مسکرائی ۔علم ہنسا ۔ چل پھر ۔ آگے چل کے دیکھ ۔ مزید دیکھ ۔ قیافے لگا ۔ جاسوسی کر ۔ جیسے کرتا رہا دوسروں کی ۔ علم چاہے کیسا بھی کیوں نہ ہو کبھی بھولتا نہیں ۔ اپنا رستہ بنا لیتا ہے ۔ وہ بھی دو دن تک دیکھتا رہا ۔ محسوس کرتا رہا ۔ کوئی آواز آتی رہی ۔ لے بھئ اب قرض اتارنے کا وقت آیا ہے ۔ وہ نہ نہ کرتا رہا ۔ اندر کوئی ہنستا رہا ۔ تیسرے دن ۔ چوڑے سینے والے کا سینہ ڈھلک گیا ۔ اکڑی گردن خم ہو گئ ۔ علم بولا تھا اندر سے ۔ آزمودہ نسخے بولے تھے ۔ یہ سامنے گھومنے پھرنے والی ۔۔ اپنی معصومیت کھو چکی ہے ۔ بہت آگے جا چکی ہے ۔ منجھے ہوئے شکاریوں کا آسان حل ہے ۔ اس رستے پر ہے ۔ جس پر روکے بھی کوئی نہ رکے ۔
سر پٹختا ۔ دہائی دیتا ۔ اوئے میں نہیں ہوں پی ایچ ڈی ۔ فن مسکراتا ۔۔ قہقے لگاتا ۔۔ کہتا ۔ سن ۔۔ تجھے پانچویں سال میں تیری ماں نے نماز سکھائی تھی ۔ ہاں سکھائی تھی اب بھی یاد ہے ۔بوہ اماں کا مار مار کر ۔ چھوڑ چھوڑ ۔ یادوں کو ۔ اور سن ۔ پانچویں سال میں سیکھی نماز ۔ کبھی کبھار پڑھنے کے باوجود یاد ہے ۔ تو جس علم کو سیکھتے عمر گزر گئ ۔ وہ کیسے بھولے ۔ ۔؟ وہ سوچتا ہے ٹوٹے کر دوں گا ہاتھ بے جان سے ہو جاتے ہیں ۔ کیوں۔ ؟ کیوں ؟ میں کوئی بوڑھا ہو گیا ہوں ۔ ؟ نہیں تو بوڑھا نہیں ہوا ۔۔ غیرت بوڑھی ہو گئ ہے ۔ وجود ہے۔ اس کا مگر بے جان سا فالج ذدہ ۔ اب وہ صرف دیکھتا ہے ۔ ۔ آنکھیں جھکا لیتا ہے ۔ بازار جاتا ہے ۔ یار بیلی نسخے پوچھتے ہیں ۔ کڑی ٹائٹ ہے استاد کوئی حربہ بتانا۔ کبھی گھنٹوں سمجھانے والا اب پہلی بات پر ہتھے سے اکھڑ جاتا ہے ۔ اوئے اوئے نہ کیا کرو ایسا ۔ نظریں بے حیا ہو جاتی ہیں ۔ سب دیکھ لیتی ہیں ہر جگہ ہر کسی کو وہ کوئی بھی ہو ۔ لوگ استاد بڈھا ہو گیا ہے کا نعرہ لگاتے مسکراتے چلے جاتے ہیں
یہ استاد ہی جانتا ہے کہ اسے کیا ہوا ہے ____

+ How to Follow the New Added Discussions at Your Mail Address?

+ How to Join Subject Study Groups & Get Helping Material?

+ How to become Top Reputation, Angels, Intellectual, Featured Members & Moderators?

+ VU Students Reserves The Right to Delete Your Profile, If?


See Your Saved Posts Timeline

Views: 263

.

+ http://bit.ly/vucodes (Link for Assignments, GDBs & Online Quizzes Solution)

+ http://bit.ly/papersvu (Link for Past Papers, Solved MCQs, Short Notes & More)

+ Click Here to Search (Looking For something at vustudents.ning.com?)

+ Click Here To Join (Our facebook study Group)

Comment

You need to be a member of Virtual University of Pakistan to add comments!

Join Virtual University of Pakistan

Comment by Binte Ahmed on September 12, 2015 at 12:05am

Barak Allah 

Comment by شیراز on September 11, 2015 at 4:30pm

Aurat ko samajhta tha jo mardon ka khilona,,,
Uss shakhs ko damad bhi wesa he mila hay,,,

Comment by شیراز on September 11, 2015 at 4:26pm

weldon...great work...

Comment by Binte Ahmed on September 10, 2015 at 8:40pm
Comment by +˚♥˚ Aήmσℓ εyèş ˚♥˚ on September 10, 2015 at 7:40pm

bhot hi acha lesson milta hai ise perne k bad...

thankss for posting .... 

keep it up kiran sis.... 

Comment by Binte Ahmed on September 10, 2015 at 7:34pm
Comment by Binte Ahmed on September 10, 2015 at 7:34pm

Thanks Sir for approval 

Comment by + Ƹ̵̡Ӝ̵̨̄ƷĈĦîĻĻî ΜίĻĻἱ Ƹ̵̡Ӝ̵̨̄Ʒ on September 10, 2015 at 3:15pm

Comment by + Ƹ̵̡Ӝ̵̨̄ƷĈĦîĻĻî ΜίĻĻἱ Ƹ̵̡Ӝ̵̨̄Ʒ on September 10, 2015 at 3:15pm

© 2019   Created by + M.Tariq Malik.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service

.