.... How to Find Your Subject Study Group & Join ....   .... Find Your Subject Study Group & Join ....  

We are here with you hands in hands to facilitate your learning & don't appreciate the idea of copying or replicating solutions. Read More>>

Study Groups By Subject code Wise (Click Below on your university link & Join Your Subject Group)

[ + VU Study Groups Subject Code Wise ]  [ + COMSATS Virtual Campus Study Groups Subject Code Wise ]

Looking For Something at vustudents.ning.com? Search Here

؟؟؟؟؟؟کیا ان کو جینے کا حق ہے

وہ پیدا ہوا ۔تو عجیب تھا ۔نہ بچہ نہ بچی ۔جنس تیسری ۔ماں حیران ۔باپ پریشان ۔باپ شکوہ کناں مالک سے ۔ ۔ربا یہ کیا دے دیا ۔ماں سجدہ ریز ۔الحمد اللہ مالک ۔تو نے جیسا دیا ۔جو بھی دیا ۔تیرا شکریہ ۔اٹھا کے سینے لگایا ۔ماں کا دودھ بچے یا بچیاں ہی نہیں پیتے تیسری جنس بھی پیتی ہے ۔جوں جوں بڑا ہوتا گیا ۔رولا بڑھتا گیا ۔باپ کہتا بھلی لوک ۔یہ مجھے دے میں اسے چھوڑ آتا ہوں اس کی برادری کے پاس ۔ماں گلے سے لگا لیتی ۔میں اس کی ماں تم باپ ۔تو اس کی برادری اور کون سی ؟زور ڈالتا ۔تو وہ منتوں پر اتر آتی ۔کیا میرے سرتاج ۔اتنا دیا ہوا خدا کا ۔کھانے دو اسے بھی ۔اونچ نیچ سمجھانے لگ جاتا ۔مگر صاحب کون جیتا آج تک مامتا سے ۔؟رولا معاشرہ بناتا ہے ۔باپ باہر جاتا ۔اشارے ہونے لگتے ۔وہ دیکھ ۔وہ ۔اس کے گھر کھسرا پیدا ہوا ہے ۔اوئے وہ دیکھ کھسرے کا باپ آرہا ہےسرگوشیاں ۔مگر ایسی کہ جس کے بارے میں کی جا رہی ہیں وہ سن لے ۔برادری والے شور کرتے ۔بھائی بے عزتی ہو رہی ہماری ۔ اسے کیوں نہیں چھوڑتے کسی گرو کے پاس ؟لوگ کہتے ہیں ہمیں وہ دیکھو ۔ان کے چچاذاد کے گھر کھسرا ہے ماموں ذادکے گھر کھسرا ہےوہ پکا ارادہ کر لیتا ۔مگر بیوی نہ مانتی ۔سو ناکام رہتا ۔پانچ سال گزر گئے ۔اللہ نے مزید اولاد دی ۔اک بچہ اک بچی ۔باپ کی آنکھوں کے وہ تارے کھسرے کو قریب بھٹکنے نہ دیتا ۔جا ماں کے پاس ۔بھائی بہن حیران ہوتے پر ان کو سمجھ کہاں تھی ابھی ۔وہ ماں کا لاڈلا ۔دو اور کو وقت کم ملتا ۔اسے ذیادہ ۔باپ شکوہ کرتا ۔تو کہتی باپ کا پیار بھی تو دینا ہے اسے تبھی تجھے ذیادہ لگتا ۔پانچ سال بعد شوہر نے پکا ارادہ کر لیا ۔اب کی بار کوئی بات نہیں مانوں گا چھوڑ کے آوں گا کہیں ۔بیوی کو کہا تو اک نظر ڈال کے سمجھ گیا ۔اب کی بار زمانہ جیتنے والا ۔پر صاحب بات وہی کون جیتا مامتا سے ۔ہاں میں سر ہلایا ۔اور اس کا سامان باندھنے لگی ۔شوہر کچھ دیر بعد آیا تو دو بیگ تیار ۔اتنا سامان اس کا ؟نہیں میرا بھی ہےکیوں ۔؟تو کہاں جا رہی ہے ؟جہاں یہ جائے گا ۔تم گھر سے نکالو ۔دروازہ بند کرو ۔پھر میں جانوں یہ جانے اور اس کا وہ خدا جس نے اس سانس دی زندگی دی وہ خدا جو فضول کوئی چیز پیدا نہیں کرتا ۔وہ خدا جو پتھر میں بھی غذا دیتا کیڑے کو ۔یہ انسان ہے ہاتھ پاوں سلامت ۔میں بھی تو ہوں کر لیں گئے گزارہ ۔بس تم گھر سے نکالو ۔بلکہ ہٹو میں خود چلی جاتی ہوں ۔شوہر تھا ۔زندگی بیتی تھی بیت رہی تھی جانتا تھا کب ہتھے سے ایسی اکھڑتی ہے کہ ہاتھ ہی نہیں آتی ۔آج اکھڑ گئ تھی وہی کرنا تھا اسے جو کہہ رہی تھی ۔اور ایسا وہ چاہتا نہیں تھا ۔مامتا سے کوئی نہیں جیت سکتا صاحب ۔پھر ذکر نہ ہوا ۔خاموشی ہو گئ تین سال تک ۔اک بیٹی اور آ گئ ۔پر ماں کا لاڈلا وہ کھسرا ہی رہا ۔وہ نویں سال میں تھا ۔جب ماں چلی گئ ۔کچھ بھی نہ تھا۔ رات سوئی ۔سویرے اٹھ نہ سکی ۔روشنیوں بھرا گھر ویران ہو گیا ۔مگر اس کی تو دنیا ہی ویران ہو گئ ۔ابھی قبر کی مٹی خشک ہی نہ ہوئی ۔کہ باپ نے گھر سے نکال دیا ۔جا کہیں چلا جا اب تیرا اس گھر میں کچھ نہیں ۔خاموشی سے نکلا ۔ماں کی قبر پر گیا ۔دل بھر کر رویا ۔بہت رویا ۔من ہلکا ہوا تو شہر کی جانب روانہ ہو گیا ۔قدم قدم پر ستم کرنے والی دنیا میں گم ہو گیا ۔باپ نے شکر ادا کیا ۔کہ جان چھوٹیمگر ابھی گہرا گھاو باقی 
گھر سے نکالے جانے کے بعد وہ درخت سے گرے پتے جیسا تھا ۔
ہوا جدھر چاہے اڑا کے لے جائے ۔ ۔
ایسا ہی ہوا ۔ ۔اک جگہ سے دوسری جگہ ۔یہاں ۔وہاں ۔کبھی کسی ورکشاب میں ۔ ۔ چھوٹے ۔ ۔کی نوکری ملی ۔
تو ۔ ۔کہیں ہوٹل کا بیرا بنا ۔
بے پناہ حسن ۔اور خدوخال میں نسوانی پن ۔اس کے لیے عذاب ٹھہرا ۔
انسان نما بھیڑیے اس پر چھپٹتے ۔وہ بھاگ پڑتا ۔
اسی بھاگ دوڑ میں ۔شہر کی مشہور معروف شخصیت ۔حاجی ہوٹلاں والے کے ہوٹل پہ جا پہنچا ۔
حاجی ہوٹلوں کا مالک تھا ۔شہر میں کئ ہوٹل ۔ ۔مارکیٹیں ۔پلازے ۔ٹرانسپورٹر بھی تھا ۔
دلیر اور اصولی آدمی ۔ صاف شفاف ۔کھرا پن ۔
اصول تھا اس ۔
بابا ہوٹل بنا ہوا ہے ۔آپ کے لیے ۔کرسیاں لگی ہوئیں دریاں چارپایاں بچھی ہوئیں ۔
یہاں بیٹھو ۔کھاو پیو ۔ ۔جب تک جی چاہے ۔یہاں رہو ۔کوئی اٹھانے والا نہیں ۔مگر ۔ ۔دنگا ۔روڈ پر ۔نشہ ہوٹل سے باہر ۔ ۔یہاں ایسا کچھ کرو گئے تو پچھتاو گئے ۔
یہاں اس کے قدم جم گئے ۔شناخت ظاہر ہو گئ ۔ ۔درندوں نے پیش قدمی کی ۔مگر یہاں حاجی تھا ۔کہتا ۔ ۔لاڈے ۔ تو جیسا بھی ہے ۔جو بھی ہے ۔جب تک حاجی کے پاس ہے کوئی مائی کا لعل تجھے کچھ نہیں کہہ سکتا ۔
ہوا بھی ایسا ۔دو چار نے پیش قدمی کی ۔حاجی آڑے آیا خوب بے عزت کیا ۔دوسرے خود ڈر گئے ۔
حاجی کے پاس گزرے وقت کو وہ بہترین وقت قرار دیتا ہے ۔حاجی اس کا استاد تھا ۔زمانے کے سرد گرم سمجھانے والا ۔

کھسروں کے گرو ۔ایسے لوگوں کی تلاش میں رہتے ہیں جو ان جیسے ہوتے ہیں ان کی برادری کے ۔جہاں ملیں پھر ساتھ لے جانے کی بھر پور کوشش کرتے ہیں ۔
اسے بھی کئ گرو لینے آئے ۔پر حاجی نے بھگا دیے ۔
گرو جی ۔میرے جیتے جی تو ایسا سوچو بھی مت ۔بعد میں جو چاہے کر لینا ۔
وہ بچا رہا ۔
دو سال تک وہ برتن دھوتا رہا ۔چائے پلاتا رہا ۔کھانا کھلاتا رہا ۔
دو سال بعد ہوٹل کے ساتھ پان سگریٹ کا کوکھا پہلے مالک نے بیچا ۔تو حاجی نے خرید کے اسے وہاں بٹھا دیا ۔
لے لاڈے ۔یہ تیری دکان ۔کما اور کھا ۔
سترہ سال تک ۔وہ اسی کھوکھے میں رہا ۔گرو آتے رہے وہ نہ نہ کرتا رہا ۔کیسے چھوڑتا اپنے محسن کو ؟
مگر اک دن محسن خود چلا گیا ۔دشمن دار تھا ۔اسی کی نظر ہو گیا ۔
وہ دوسری بار جی بھر رویا ۔یتیم سا محسوس کیا خود کو ۔سائے سے یکدم گہری ۔چلچلاتی دھوپ میں آپڑا ۔
حاجی کیا مرا ۔اس پر تو نشتروں کی بوچھاڑ ہو گئ ۔ کون روکتا ۔۔
گرووں نے پھر حلہ بولا ۔کہا ۔لاڈے ادھر کیا رکھا ۔قسمیں تو ہیرا ہے ہیرا ۔ساتھ چل ۔تجھے تیری قیمت بتائیں ۔
وہ نہ جاتا ۔مگر نشتر ۔دن رات چپھتے نشتر ۔کوئی ٹھکانا تو کرنا تھا ۔
سو کھوکھا چھوڑا ۔گرو کے آستانے پہ آبیٹھا ۔
وہ واقعی ہیرا تھا ۔گرو نے تراشا تو اسے خبر ہوئی ۔اک سال میں ہی ڈانس میں طاق کر دیا ۔
سٹیج پر جاتا ۔تو سماں باندھ دیتا ۔ایسا ناچتا وجد میں کہ نظر نہ ٹکتی تماشبینوں کی ۔ہاتھ نہ رکتے ویل کراتے ہوئے ۔
یہ نئ زندگی تھی اس کی دو ۔تین سال یہاں بیتے ۔یہاں سب تیسری جنس تھے ۔سو۔بٹوارہ نہیں تھا ۔
اس کی وجہ سے گرو کا گروپ سارے شہر میں مشہور ہو گیا ۔نام تھا ۔ہے جی کوئی لاڈا نام کا کھسرا ۔
گرو۔اسے لاڈلی کہتا ۔

اس دن وہ فارغ تھا ۔کچھ دن پہلے گرو نے۔اسے اک پلاٹ لے کر دیا تھا ۔اس نے سوچا ادھر چکر لگا لے ویسے بھی ان دنوں دھندا ذرا ٹھنڈا ہے ۔تو کیوں نہ اس کی چاردیوای ہی بنوا لے ۔
یہی سوچ کر گرو سے اجازت چاہی تو اس نے کارڈ جھولی میں پھینک دیا ۔
لاڈلی یہ آج رات کے پرو گرام کا کارڈ ہے ۔نام پتا ٹھکانا لکھا ۔آج کدھر نہ جا ۔بڑا پروگرام ہے آرام کر ۔
اس نے کارڈ پر نظر ڈالی بلانے والے کا نام پڑا 
ملک تاج خان ۔
نام پڑھتے ہی اک سنسی اس کے پورے بدن میں دوڑتی چلی گئ کارڈ گر گیا ۔ پروگرام اس نے بہت کیے تھے ۔ ۔معروف ڈانسر تھا ۔روز کا معمول تھا ۔پروگرام بڑا ہو یا چھوٹا ۔اسے غرض نہیں تھی ۔

مگر یہ ملک تاج کا پروگرام ؟ ۔۔۔؟
عجیب حالت ہو گئ اس کی ۔وہ ناچنا چاہتا تھا ۔اور نہیں ناچنا چاہتا تھا ۔ ۔
اس نے گرو سے پوچھا ۔ ۔گرو ۔یہ پروگرام کس نے دیا ہے ؟
ہے لو ۔لاڈلی ملک تاج پرانا شوقین ہے ۔ اس نے خود دیا پروگرام ۔اور کس نے دینا تھا ۔
پھر گرو یادیں تازی کرنے لگ گیا ۔
ہائے ہائے لاڈلی کیا وقت تھا مجھ پر ۔بلکل تیری طرح سماں باندھ دیتی تھی میں ۔ اور یہ ملک تاج ۔ہائے ہائے کیا شوقین تھا۔ ہائے ہائے ۔

وہ سنتا رہا ۔حیران ہوتا رہا 
۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
پروگرام اک بڑی حویلی میں تھا ۔دو حصے تھے پروگرام کے ۔اک میں عام عوام تھی ۔گرو کے مطابق دس بیس روپے والے شوقین ۔
دوسرا حصہ معززین کے لیے تھا ۔ ۔جہاں نوٹوں کی بارش ہوا کرتی تھی ۔
گرو کو حکم ملا تھا کہ خاض ۔ پیس ۔ بچا کے رکھنا ۔ 
گرو نے اسے اور اس کے ساتھ اک اور ڈانسر کو ۔روک لیا ۔مگر لاڈے نے انکار کردیا ۔
گرو ۔ ۔آج خاص پروگرام میں بس میں ناچوں گا ۔ ۔کوئی دوسرا نہیں ۔
ایسے ہوتا نہیں تھا ۔مگر نہ جانے اس کے لہجے میں کیا بات تھی ۔گرو انکار نہ کر سکا ۔
پروگرام شروع ہو گیا وہ پردے کے پیچھے بیٹھا دیکھتا رہا ۔خوب ہاو کار مچی ہوئی تھی ۔ مگر اس کی نظریں دولہے پر ٹکی تھیں ۔پلک چھپکائے دیکھ رہا تھا ۔گرو سے یہ انہماک ۔چھپ نہ سکا ۔پوچھ بیٹھا ۔
لاڈلی ۔سچ بول کیا مسلہ ہے آج تجھے ۔ ۔
میں دیکھ رہی ہوں ۔تو ہنسنا چاہتی ہے اور رو پڑتی ہے ۔رونا چاہتی ہے تو ہنس پڑتی ہے ۔تو خوش بھی بہت ہے ۔تو غمگین بھی بہت ہے ۔بول مسلہ کیا ہے ۔ ؟
دو آنسو آنکھوں سے نکلے ۔میک ذدہ رخساروں پر لکیر ڈالتے کہیں گر گئے اور وہ روتے ہوئے ہنسنے لگا ۔
گرو بس آج دیکھو پھر ۔نہ کوئی ایسا پروگرام دیکھا ہو گا نہ آئندہ دیکھو گئے ۔جیسا آج ہے ۔
گیارہ بچے کے بعد دوسرا راونڈ شروع ہو گیا ۔ ۔یہ اک بڑے ہال میں تھا ۔گاو تکیے لگے ہوئیے ۔اور محدود تعداد میں کرسیاں بھی ۔تعداد بھی محدود تھی ۔مگر جو تھے سب ٹن تھے ۔بوتلیں کھلی پڑیں تھیں ۔ گلاس کھنک رہے تھے ۔چرس بھرے سگریٹوں کا دھواں جالے بناتا ۔غائب ہو رہا تھا ۔
سب کے سب معززین شہر تھے ۔ بڑی عزتوں والے تھے ۔رات کا اندھیرا جن کے کرتوت چھپا لیتا ہے ۔
اس کی نظر ۔تمتمائے چہرے والے ملک تاج پر ٹک گئ ۔پیے ہوئے تھا وہ بھی مگر کچھ کم ۔
ساز جھڑ گئے ۔وہ گھنگھرو پہنے میدان میں اتر گیا ۔نغمے کے بول بلند ہوئے ۔
مائے نی میں کنوں آکھاں ۔درد وچھوڑے دا حال نی ۔ ۔
چھن چھن چھن چھنا ۔
اک بجلی سی کوندی اس کے رگ وپے میں ۔
پاوں تھے ٹکتے ہی نہیں تھے ۔
ساز کیا کہہ رہے ہیں ۔آواز کیا کہہ رہی ہے کچھ پتا نہیں وہ بے خود تھا ۔
گرو سمیت ۔سب کے سب پرانے شوقین ۔حیرت ذدہ ۔ ۔ایسا ڈانس کہیں نہیں دیکھا تھا ۔

گرو کو اس کی آنکھوں میں نمی نظر آئی ۔ ۔ساتھ والے سے بولا ۔ہائے ہائے رنگیلی ۔مجھے تو لاڈلی کی آنکھوں میں لہو کے اتھرو نظر آ رہے ہیں مولا خیر کرے ۔پر آج خیر نہیں ہے 
وہ ناچتا رہا ۔نوٹ نچھاور ہوتے رہے ۔بہکے بہکے شرابی ۔آگے بڑھتے ۔لپٹنے کی کوشش کرتے ۔لپٹ نہ سکتے ۔دور جا گرتے ۔
مگر ملک تاج جب بھی قریب گیا ۔وہ خود سمٹ کے باہئوں میں آگیا ۔ ۔
اس کے تمتمائے چہرے پر فخر وغرور کی لالی ابھری 
دیکھو ۔جو کسی کو ہاتھ نہیں لگانے دیتا ۔میرے پاس خود چلا آتا ہے 
تین گھنٹے گزر گئے ۔وہ نہیں تھکا ۔پر دیکھنے والے لڑھک گئے ۔مدہوش ہو گئے ۔بے ترتیب ہو گئے ۔
پروگرام رک گیا ۔ملک تاج اور کچھ اور ہوش میں تھے ۔رواج ہے کے ایسے موقعے پر جو میزبان ہوتے ہیں ۔آگے بڑھتے ہیں نوٹوں کے ہار گلے میں ڈالتے ہیں ۔ ۔ ۔کچھ نقد دیتے ہیں اور ۔تب ڈانس پارٹی رخصت ہوتی ہے ۔ وہی ہوا ملک تاج نے سب کے گلوں میں ہار ڈالے ۔
وہ آخر میں تھا ۔نگائیں متلاشی کسی کی ۔خلاف معمول ۔نوٹوں کا تھیلا اس نے نوٹ لینے والے سے لے لیا تھا ۔اب اس کے ہاتھ میں تھا ۔
آخر ۔کار وہ ملک تاج کے روبرو پہنچا ۔نگائیں ملیں ۔اک شیطانیت سی لپکی ملک کی آنکھوں میں ۔ہاتھ بہکے رخساروں پر لگے اور ہار پہنا دیا ۔
ختم ۔

۔نہیں نہیں کہاں ختم ۔
لاڈے نے ہاتھ پکڑ لیا ۔
پہچانا ملک جی ۔؟
گرو تن کر کھڑا ہو گیا ۔جس داستان نے آج منکشف ہونا ہے اس کا وقت آن پہنچا ۔
نہیں لاڈلی ۔پہلی بار دیکھا تجھے ۔پر گرویدہ ہو گیا ہوں ۔
اس نے ہار اتار کر ۔ہاتھ میں پکڑ لیا ۔
پر ملک جی میں نے تو پہلی بار نہیں دیکھا ۔
آہستہ آہستہ قریب ہو گیا باہنوں میں سمٹ گیا ۔
مدت سے ترسا ان باہنوں میں آنے کے لیے ۔اتنا قریب ہونے کے لیے ۔
ہائے ہائے لاڈلی ۔آج تو نے دل جیت لیا ۔
ہاتھ جانب جیب بڑھے ۔کچھ نچھاور کرنے کو ۔
مگر لاڈے نے پکڑ لیے ۔
نہیں ملک جی اب بس ۔اب اور کچھ نہیں لینا ۔اب میں نچھاور کرنا ہے نچھاور ہونا ہے ۔
خاموشی ۔بس اک گرو جانتا تھا کچھ ہونے والا ہے ۔پر کیا ؟یہ اسے بھی معلوم نہیں تھا ۔
لاڈے نے ہار اتارا ۔
ملک کے گلے میں ڈال دیا ۔آنکھیں ڈالیں آنکھوں میں ۔
آج تک کھسرے لیتے ہیں ۔ویل ۔ ۔ودھائی ہار ۔ ۔
پر میں آج دے کر جا رہا ہوں ملک جی 
نوٹوں کا تھیلا کھولا ۔نوٹ پکڑے ۔ملک پر پھینک دیے ۔
مجھے پہچانو ملک جی ۔میں وہ بدنصیب ہوں جس کا باپ اس پر عاشق ہے ۔
یہ لو ملک جی ۔یہ ۔ اک کھسرے کی ویل ۔اپنے باپ پر 
دل دھک سے رہ گئے ۔نشہ گہرہ ہوتا ہوتا اتر گیا ۔بند ہوتی آنکھیں پوری کی پوری کھل گئ ۔گروکو جھٹکا لگا ۔ساتھی تھرا کر رہ گئے ۔جاگتے سوتے شوقین جاگ گئے 
یہ کیا کہہ رہے ہو ۔؟
نوٹوں کو پرے دھکیلتا ملک چیخ پڑا ۔
پر کہاں ۔کہاں تک جائے ۔وہ نوٹ پھینکتا آتا تھا روتا جاتا تھا ۔کہتا جاتا تھا ۔
ویل ۔افلاق احمد کی ۔ملک تاج پر ۔اک آدھے بیٹے کی ویل ۔اک آدھی۔بیٹی کی ویل ؟
ویل ۔بھائی کی شادی پہ ۔باپ پر ویل کھسرے کی ۔
ملک ملک تاج میں افلاق احمد ۔آنسہ کا بیٹا ۔ یہ دیکھ ۔ ادھر آنکھ کھول ۔یہ میں یہ ۔ یہ تو اور یہ میری جنت ۔میری ماں ۔یہ ۔روشنا ۔ ۔تیری بیٹی ۔آنسہ کی بیٹی ۔میری ۔ میری ۔بہن ۔
پر کہاں ۔ رشتے چلتے ہیں پگ سے ۔وہ تو ۔تھا ۔دھتکار دیا ۔اب کون بھائی کون بہن ۔
وہ بلک بلک کے رو دیا ۔خود کیا رویا ۔نشئوں کو رلا دیا ۔گرو رو ۔ پڑا ۔ساتھی رو پڑے ۔
ملک تاج ۔
آنسو تھے اس کی آنکھوں میں ۔
ملک تاج رو پڑا ۔
بلک پڑا ۔دھرتی ۔زمین ۔ذرا جگہ تو دے مجھ پر الٹ تو پڑ ۔مجھےچھپا تو سہی ۔۔
مگر صاحب ۔ایسے موقعوں پر دھرتی جگہ نہیں دیا کرتی پیروں سے پکڑ کے یوں دھڑام سے گرا دیتی ہے ۔
جیسے وہ گر گیا تھا دھرتی پر اپنی نظروں سے 
لاڈا ۔نوٹ پھینکتا جاتا ۔روتا جاتا ۔
لاکھوں ملے آج تیرے گھر ۔پر اک نوٹ نہیں لے کر جانا ۔یہ لے یہ بھی ویل ۔اتنا ہی کھاتا میں جتنے تو نے آج اک رات میں نچھاور کیے مجھ پر ۔ اک کمرے میں رہ لیتا ۔مگر مگر 
گرو آگے بڑھا ۔ ۔ساتھے آگے بڑھے ۔
سنبھال لاڈے ۔سنبھل لاڈے 
وہ بلکتا نوٹ پھینکتا ۔رہا ۔تڑپتا رہا ۔
گرو ۔میرا گرو ہے تو الٹ دے جو آج ملا ۔چل الٹ ۔مجھے لے چل ۔یہاں سے ۔ 
گرو اس کا گرو تھا ۔
میں آپ ۔وہ کوئی نہیں پہنچ سکتا اس درد تک جو افلاق احمد ۔عرف لاڈے عرف لاڈلی کو تھا ۔
گرو پہنچ سکتا تھا ۔سو پہنچا ۔الٹ دیا نوٹوں کا تھیلا ۔ملک تاج پر ۔جو اب نوٹوں میں چھپا ۔سسک رہا تھا ۔
اللہ جانے کس بات پر.......

#copied

Share This With Friends......


How to Find Your Subject Study Group & Join.

Find Your Subject Study Group & Join.

+ Click Here To Join also Our facebook study Group.


This Content Originally Published by a member of VU Students.

+ Prohibited Content On Site + Report a violation + Report an Issue

+ Safety Guidelines for New + Site FAQ & Rules + Safety Matters

+ Important for All Members Take a Look + Online Safety


Views: 58

See Your Saved Posts Timeline

Comment

You need to be a member of Virtual University of Pakistan to add comments!

Join Virtual University of Pakistan

Comment by imran khan 19 hours ago

Donation

A quality education changes lives & start with you.

Forum Categorizes

Job's & Careers (Latest Jobs)

Admissions (Latest Admissons)

Scholarship (Latest Scholarships)

Internship (Latest Internships)

VU Subject Study Groups

Other Universities/Colleges/Schools Help

    ::::::::::: More Categorizes :::::::::::

Member of The Month

1. ♥Farrukh♥Kamboh (BSCS)

Sheikhupura, Pakistan

© 2018   Created by + M.TariK MaliC.   Powered by

Promote Us  |  Report an Issue  |  Privacy Policy  |  Terms of Service